رینجرزپرحملوں میں ملوث4دہشتگرد گرفتار

دہشت گردوں کا را سے فنڈنگ کا اعتراف
[caption id="attachment_2103921" align="alignright" width="999"] فائل فوٹو[/caption]

سی ٹی ڈی نے کراچی سمیت سندھ میں رینجرز پر ہونے والے پے در پے حملوں میں مبینہ طور پر ملوث بھارتی خفیہ ایجنسی کے لیے کام کرنے والے  4 دہشت گرد گرفتار کرلیے۔

ڈی آئی جی محکمہ انسداد دہشت گردی (سی ٹی ڈی) عمر شاہد حامد اور عارف عزیز نے کراچی میں اہم پریس کانفرنس میں بتایا کہ جون جولائی میں کراچی سمیت سندھ میں رینجرز پر ہونے والے سیریل حملوں میں بھارتی خفیہ ایجنسی کا ہاتھ ہے۔

عمر شاہد حامد کے مطابق رینجرز پر سیریل حملوں میں ملوث 4 دہشت گردوں کو گرفتار کیا ہے۔ گرفتار چاروں ملزمان کا تعلق کالعدم سندھ ریوولیوشن آرمی ( ایس آر اے) سے ہے، جب کہ ملزمان کے قبضہ سے ہینڈ گرنیڈ اور پستول بھی برآمد کرلیے گئے ہیں۔ گرفتار ملزمان میں سارنگ عرف سہیل میرانی، بشیر احمد، انیس احمد اور خاوند بخش عرف سلیم سندھی شامل ہیں۔

ڈی آئی جی کا مزید کہنا تھا کہ ملزمان نے 10 جون کو کامران چورنگی گلستان جوہر میں رینجرز موبائل پر دستی بم حملہ کیا۔ 10 جون کو دوسرا حملہ رینجرز چوکی منزل ملیر میں کیا، حملے میں 2 راہ گیر زخمی بھی ہوئے تھے۔ 19 جون کو لیاقت آباد احساس پروگرام کے باہر کھڑی رینجرز موبائل پر بھی دستی بم حملہ کیا گیا۔ اس حملے میں 1 شہری جاں بحق، جب کہ رینجرز اہلکار سمیت 8 افراد زخمی ہوئے تھے۔

عمر شاہد نے کہا کہ گھوٹکی میں رینجرز موبائل پر دستی بم حملہ، جولائی کو بلاول شاہ نورانی سچل میں بیکری پر دستی بم حملہ بھی ان ہی دہشت گردوں نے کیا۔ گرفتار دہشت گردوں نے دوران تفتیش اعتراف کرتے ہوئے کہا کہ سندھ ریوولیوشن آرمی کو را دہشت گردی کیلئے فنڈنگ کرتی ہے۔ ایس آر اے کا جنگجو سید اصغر علی عرف سجاد شاہ ہے، سجاد شاہ کا بھائی سفاری پارک فائرنگ واقعہ میں مارا گیا ہے۔ ملزمان سے مزید تفتیش جاری ہے۔

Tabool ads will show in this div