ریکوڈک کرپشن کیس میں دو ملزمان گرفتار

کیس میں 26 افراد نامزد ہیں
Photo/AFP
Photo/AFP
[caption id="attachment_2091521" align="aligncenter" width="800"] Photo/AFP[/caption]

قومی احتساب بیورو ( نیب) کے راولپنڈی برانچ نے ریکوڈک کیس کے سلسلے میں دو ملزمان کو گرفتار کرلیا ہے۔

نیب کے مطابق ملزمان شیر ​​خان اور محمد فاروق کو اسلام آباد سے گرفتار کیا گیا ہے۔ ان کا ٹرانزٹ ریمانڈ حاصل کرنے کے بعد انہیں نیب بلوچستان کے حوالے کیا جائے گا۔ ملزمان کے خلاف ایک دن پہلے ہی نیب بلوچستان نے کوئٹہ کی احتساب عدالت میں اس کیس میں ریفرنس دائر کیا تھا۔

بدھ کو نیب کے ترجمان نے بتایا تھا کہ 30 سالہ ریکارڈ کی جانچ پڑتال کے بعد 26 ملزمان کے خلاف ریفرنس دائر کیا گیا ہے۔ ان افراد پر الزام ہے کہ انہوں نے چاغی ہلز ایکسپلوریشن جوائنٹ وینچر میں آسٹریلیائی کمپنی بروکن ہل پرپریٹری کو غیر قانونی طور پر فائدہ پہنچایا۔

ریفرنس میں کہا گیا کہ ملزمان نے بلوچستان کان کنی مراعات کے قواعد میں غیر قانونی طور پر ترمیم کرکے اور ایک نئی کمپنی تیتھیان کاپر متعارف کرکے مالی فائدہ اٹھایا۔

ترجمان کے مطابق دوران تحقیقات یہ بات بھی سامنے آئی کہ بلوچستان کے حکام نے رشوت لیکر تیتھیان کاپر کو غیرقانونی طور پر اراضی بھی الاٹ کی۔

تیتھیان کاپر نے2012  میں لیز کی درخواست مسترد ہونے پر ورلڈ بینک کی ثالثی عدالت سے رجوع کیا تھا۔ کمپنی نے نے موقف اختیار کیا کہ اس نے ریکوڈک کانوں میں 220 ملین ڈالر سے زیادہ کی سرمایہ کاری کی ہے۔

ثالثی عدالت نے جولائی 2019 میں فیصلہ سناتے ہوئے پاکستان کو حکم دیا تھا کہ کمپنی کو 6 6 بلین ڈالر ہرجانہ ادا کیا جائے۔ لیکن ستمبر 2020 میں پاکستان کو اس فیصلے پر اسٹے مل گئی۔ کیس کی حتمی سماعت مئی 2021 میں متوقع ہے۔

REKO DIQ

Curroption

Tabool ads will show in this div