دہشتگردی کا خطرہ: کوئٹہ اور پشاور میں تھریٹ الرٹ جاری

نیکٹا نے سیکیورٹی بڑھانے کی سفارش کردی
Oct 22, 2020

کوئٹہ اور پشاور میں دہشت گردی کی وارننگ جاری کردی گئی۔ نیکٹا کے مطابق اہم سیاسی شخصیت کو خودکش دھماکے کے ذریعے نشانہ بنایا جاسکتا ہے، سیاسی اور مذہبی اجتماعات کی سیکیورٹی بڑھائی جائے۔

کوئٹہ میں 25 اکتوبر کو پاکستان ڈیمو کریٹک موومنٹ کا جلسہ ہے جبکہ ملک بھر میں جمعہ 31 اکتوبر کو (بارہ ربیع الاول) عید میلاد النبیﷺ مذہبی جوش و خروش سے منایا جائے گا۔

نیشنل کاؤنٹر ٹیررازم اتھارٹی (نیکٹا) نے بلوچستان اور خیبرپختونخوا کیلئے تھریٹ الرٹ جاری کردیا، چاروں صوبوں کے چیف سیکریٹریز کو خطرات سے آگاہ کردیا گیا۔ حکام کے مطابق قمر دین کاریز سے برآمد ہونیوالا بارودی مواد کوئٹہ اور پشاور میں دہشت گردی میں استعمال ہونا تھا۔

نیکٹا کا کہنا ہے کہ اہم سیاسی شخصیت کو خودکش دھماکے کے ذریعے نشانہ بنایا جاسکتا ہے۔ اتھارٹی نے سیاسی اور مذہبی اجتماعات کی سیکیورٹی بڑھانے کی بھی سفارش کردی۔

نیکٹا کے مطابق دہشتگرد منصوبے میں ہائی پروفائل شخصیت کو قتل کرنے کی منصوبہ بندی شامل ہے، کالعدم تنظیم کوئٹہ اور پشاور میں سایسی اور مذہبی قائدین پر حملہ کرسکتی ہے۔

ترجمان بلوچستان حکومت

ترجمان بلوچستان حکومت لیاقت شاہوانی کا کہنا ہے کہ جلسے کرنا سیاسی جماعتوں کا حق ہے، امن و امان اور استحکام کے دور میں جلسے کرنے میں کوئی مضائقہ نہیں، نیکٹا ایک ذمہ دار ادارہ ہے، جس کی جانب سے جاری الرٹ کو سنجیدہ لینا چاہئے، پی ڈی ایم کی قیادت کو بھی ایسے حالات میں سوچنا چاہئے، اگر اپوزیشن عوامی مفادات کو مد نظر رکھتے ہوئے جلسہ ملتوی کردے تو بہتر ہے۔

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے مزید کہا کہ دو ہفتے قبل مکران کے کوسٹل حصے میں فورسز کو نشانہ بنایا گیا، الرٹ کے بغیر بھی بلوچستان کے حالات کافی سنجیدہ ہیں، پی ڈی ایم بھی کوئٹہ جلسے کی تاریخ تین بار تبدیل کرچکی ہے، پہلے 11، 18 اور پھر 25 اکتوبر کی تاریخ کی گئی۔

ن لیگ کا مؤقف

سابق وزیر داخلہ اور مسلم لیگ ن کے سینئر رہنماء احسن اقبال نے سماء ڈیجیٹیل سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ہمارے دور میں بھی دہشت گردی کا سامنا تھا، ہم نے اسے شکست دی، پی ٹی آئی اور دیگر جماعتوں کے تمام جلسوں کو بھرپور سیکیورٹی فراہم کی گئی، حکومت کی ذمہ داری ہے کہ جلسوں کو سیکیورٹی دے۔

ان کا کہنا ہے کہ جلسے کرنا سیاسی جماعتوں کا حق ہے، تھریٹ الرٹ کا سد باب کرنا حکومت کی ذمہ داری ہے، کسی تھریٹ الرٹ پر جلسوں کو ملتوی نہیں کیا جاسکتا، حکومت کا فرض ہے کہ دہشت گردی کے خطرے پر بہتر حفاظتی اقدامات کرے، وہ تھریٹ الرٹ کی ذمہ داری اپوزیشن پر نہیں ڈال سکتی۔

ضیاء لانگو کی پریس کانفرنس

کوئٹہ میں نیوز کانفرنس کرتے ہوئے صوبائی وزیر داخلہ ضیاء لانگو نے کہا کہ پی ڈی ایم کے جلسے سے متعلق تھریٹ الرٹ موصول ہورہے ہیں، حکومت نے سیکیورٹی کیلئے ازخود انتظامات کئے ہیں، پی ڈی ایم کے قائدین کی جانب سے کوئی درخواست موصول نہیں ہوئی، دشمن بد امنی کیلئے پورا پیسہ لگارہا ہے۔

ضیاء لانگو نے درخواست کی کہ پی ڈی ایم قائدین جلسے میں عوام اور اداروں کیخلاف نفرتیں نہ پھیلائیں، کرونا وائرس سے متعلق ایس او پیز کا خیال رکھا جائے، کسی کو جمہوری حق سے محروم نہیں کرنا چاہتے۔

ان کا کہنا ہے کہ عوام منفی ہتھکنڈے اپنانے والوں سے واقف ہیں، پی ڈی ایم کی تحریک سے حکومت کو کوئی خطرہ نہیں، کراچی میں ہونیوالے واقعے کو کوئی اچھا نہیں کہہ رہا، تحقیقات کے بعد سچ سامنے آجائے گا۔

دفاعی تجزیہ کار

سماء ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے دفاعی تجزيہ کار حارث نواز کہتے ہيں موجودہ صورتحال سے ملک دشمن عناصر فائدہ اٹھاسکتے ہيں، سیاسی جماعتوں کے جلسے کسی محفوظ جگہ ہونے چاہئيں، خدانخواستہ کچھ ہوگيا تو ملک دشمن حکومت اور فوج پر الزام تراشياں کريں گے۔

NECTA

PDM

Tabool ads will show in this div