سعودی عرب سے خراب تعلقات پر ترکی کو بھاری مالی نقصان

گزشتہ برس ترک سرمایہ کاروں کو3ارب ڈالر کا خسارہ ہوا

ترکی کو سعودی عرب کے ساتھ تعلقات بگاڑنے کے نتیجے میں سن 2019ء میں 3 ارب ڈالر کا نقصان اٹھانا پڑا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق ترکی کے اخبار جمہوریت نے انقرہ کے سعودی عرب کے ساتھ تعلقات خراب ہونے کے نتائج پر روشنی ڈالتے ہوئے لکھا ہے کہ ترکی اور سعودی عرب کے درمیان جاری سرد مہری کے نتیجے میں مشرق وسطیٰ میں ترکی  کے سرمایہ کاروں کو 3 ارب ڈالر کا نقصان اٹھانا پڑتا ہے۔

جبکہ سن 2017ء اور سن 2018ء کے دوران ترک سرمایہ کاروں اور ٹھیکیداروں کو 2 ارب 10 کروڑ ڈالر کا نقصان اٹھانا پڑا تھا۔ رواں سال کے پہلے 9 ماہ میں ترک سرمایہ کاروں کو ہونے والے خسارے کا تخمینہ 21 ارب ڈالر لگایا گیا ہے۔

ترک ٹھیکیدار یونین کے چیئرمین مدحت قون کا کہنا ہے کہ سعودی عرب کے ٹھیکیدار مختلف منصوبوں پر کاموں کے حوالے سے دوسرے نمبر پر ہیں جبکہ ترکی کا نمبر چھٹا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ترک ٹھیکیداروں نے مشرق وسطیٰ میں‌ مجموعی طور پر دو ہزار 111 منصوبوں‌ پر 10 ارب 70 کروڑ ڈالر کی سرمایہ کاری کی ہوئی ہے۔

Tabool ads will show in this div