بہادرپولیس کا کارنامہ،سرعام بےگناہ خاتون کی پٹائی کردی وڈیومنظرعام پر

کراچی :  کراچی میں پولیس اہلکار کے ہاتھوں سرعام بے گناہ خاتون کی پٹائی کی وڈیو منظر عام پر آگئی، ذرائع کے مطابق خاتون کو چوری کے الزام میں لوگوں نے پکڑا، تاہم موقع پر موجود پولیس اہل کار نے بھرے مجمع میں اسے تھپڑ مارے اور غلیظ زبان استعمال کی۔ کراچی کے پوش علاقے کلفٹن کے شاپنگ مال میں کچھ لوگوں کی جانب سے خاتون پر الزام عائد کیا گیا کہ انہوں نے چوری کی ہے، اس وقت خاتون اپنے کم عمر بیٹے کے ہمراہ شاپنگ مال میں موجود تھیں، لوگوں کی جانب سے الزام عائد کرنے اور شور شرابے پر قریبی موبائل میں بیٹھے پولیس اہل کار اپنے آپ کو ہیرو بنانے جائے وقوعہ پر پہنچیں۔ قانونی چارہ جوئی کرنے کے بجائے بہادر پولیس کے بہادر سپوتوں نے عین سڑک کو تھانا اور خود کو فیصلہ سنانے والا بنا ڈالا، بغیر کسی چھان پھٹک کے،ثبوت اور گواہوں نے بہادر رضا کار نے خاتون کی تھپڑوں سے تواضع کرنی شروع کردی، قومی رضا کار نے صرف اسی پر بس نہ کیا، اپنی رضا کارانہ طاقت اور ہمت کو زبان کے ذریعے بھی استعمال کیا اور بغیر کسی لحاظ کے  خاتون کو گالیاں بھی دیں۔ خاتون کے ساتھ ایک کم سن بچہ بھی تھا، جو سہما ہوا تمام کارروائی دیکھتا رہا، مگر کم عمر اور کمزور بچہ یہ کھلے عام تشدد اور زیادتی روکنے سے قاصر رہا اور آنسو بہا کر اپنی بے بسی اور مفلسی کا اظہار کرسکا۔ اس موقع پر موجود قومی رضا نے تھپڑ مار کر خاتون سے کہا کہ ابھی دیکھتا ہوں کہ وہ کیسے چوری کا اعترف نہیں کرتی اور سامان واپس کیسے نہیں کرے گی۔ واقعہ کی ویڈیو منظر عام پر آنے پر پولیس کے حکام اعلیٰ میں کھلبلی مچ گئی، نا صرف پولیس بلکہ وڈے سائیں بھی نیند سے جاگے اور پورا دن گزرنے کے بعد واقعہ کا نوٹس لیتے ہوئے رپورٹ طلب کرلی۔ ذرائع کے مطابق متعلقہ قومی رضا کار کا نام اکبر ہے۔ وزیراعلیٰ اور پولیس حکام کے نوٹس لینے پر خاتون پر تشدد کرنے والے قومی رضاکار کی گرفتاری کیلئے پولیس کی دو ٹیمیں روانہ کردی گئیں، ایک ٹیم اورنگی اور دوسری کورنگی کی طرف روانہ کی گئی، قومی رضاکار کی رہائش اورنگی میں بتائی جاتی ہے، جب کہ کورنگی میں رضاکار اکبر کا سسرال ہے، پولیس کے مطابق ادارے کی بدنامی کا سبب بننے والے رضا کار اکبر کو جلد گرفتار کرلیں گے۔ ساری صورت حال کا جائزہ لینے کے بعد وزیر داخلہ بھی شہیدوں میں نام کرنے آگئے، واقعہ کا نہ صرف نوٹس لیا بلکہ متعلقہ رضا کار کو فوری گرفتار کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے اس کے خلاف مقدمہ درج کرنے کا حکم بھی دیا۔ واضح رہے کہ متاثرہ خاتون اپنی بیٹے کے ہمراہ کلفٹن کے شاپنگ مال میں موجود تھیں کہ کچھ افراد کی جانب سے ان پر چیزیں چرانے کا الزام عائد کیا گیا، جس پر قریبی کھڑی موبائل میں موجود رضا کار نے ماچو مین کی طرح انٹری مار کر خاتون کو بیٹے کے سامنے تشدد کا نشانہ بنایا۔ سماء

POLICE MAN

FOOTAGE

WOMAN

cm sindh

son

lady

shopping mall

VOLUNTEER

Tabool ads will show in this div