شادی ہالزکےلیےنئی گائیڈ لائنزجاری

مُلکی سطح پر کیسز میں اضافہ ہوسکتا ہے
Oct 10, 2020

[video width="640" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2020/10/NCOC-Marriage-Halls-SOPs-Isb-Pkg-09-10.mp4"][/video]

این سی او سی نے شادی ہالز کیلئے ہیلتھ گائیڈ لائنزجاری کردیئےہیں۔

این سی او سی نے بتایا ہے کہ مُلک میں کرونا وائرس کی صورتحال کنٹرول میں دیکھتے ہوئے شادی ہالز کو 15 ستمبر سے کھولا گیا تھا البتہ ہائی رسک سیکٹر ہونے کے باعث ایس او پیز پر عمل درآمد نہ ہونے کی وجہ سے مُلکی سطح پر کیسز میں اضافہ ہوسکتا ہے۔

این سی او سی نےبتایا ہے کہ ہائی رسک سیکٹر ہونے کے باعث بیماری کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے شادی ہالز کے لیے ایس او پیز مرتب کیے گئے ہیں۔ نئے شرائط کے تحت اِن ڈور تقریبات کیلئے 300 جبکہ آؤٹ ڈور میں 500 افراد کے جمع ہونے کی اجازت ہوگی۔

اس کےعلاوہ دو گھنٹے کے ایونٹ کو رات دس بجے تک جاری رہنے کی ہی اجازت ہوگی۔ایس او پیز کی خلاف ورزی کی صورت میں شادی ہالز کو سیل اور بھاری جرمانے عائد کیے جائیں گے۔

این سی اوسی نےواضح کیا ہےکہ شادی ہالز سیل ہونے کی صورت میں ہال مالکان کو ایڈوانس میں لی گئی تمام رقوم متعلقہ فیملیز کو واپس کرنا ہونگی۔

NCOC

Tabool ads will show in this div