کراچی میں بلاٹوٹ گیا،تیرنشانےسےچھوٹ گیا

موجودہ صورتحال سے مانی اورفخرعالم شدیدمایوس
Aug 31, 2020

کراچی میں ریکارڈ توڑبارشوں کے بعد شہرکی ابترصورتحال پراداکار مانی اور گلوکار فخر عالم نے شدید ناراضگی کااظہارکیا ہے۔ گلوکار نے حکومت سے ٹیکس نہ لینے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ صرف نالوں کی نہیں نااہلوں کی صفائی بھی کرنی پڑے گی۔

سماء کے پروگرام نیا دن میں دونوں نے اپنے تحفظات بیان کرتے ہوئے حکومت اوردیگر متعلقہ اداروں کی کارکردگی پر شدید مایوسی کااظہارکیا ۔

دبئی میں موجود فخرعالم کو اپنے والد کی خیریت دریافت کرنے میں شدید مشکلات کاسامنا کرنا پڑا اور وہ 2 دن تک ان سے رابطہ نہ کرپائے۔ انہوں نے کہا کہ 5 دن سے گھر میں بجلی نہیں ، اس لیے گھروالوں کو ہوٹل میں منتقل کردیا، 21 ویں صدی میں یہ حال ہے، حکومت سے سوال اٹھاوتوجمہوریت خطرے میں آجاتی ہے۔

فخرعالم نے کہا کہ ڈی ایچ اے اورحکومت اس بارتمام ٹیکسزمعاف کردے، امداد نہیں ہے تو نہ دیں لیکن برائے مہربانی جو ٹیکس لینے تھے وہ نہ دیں تا کہ لوگ اپنے گھروں اور کاروبارکو ٹھیک کرلیں۔ ڈی ایچ اے اور کنٹونمنٹ بورڈزکے رہائشی زچ ہو کے آج احتجاج کررہے ہیں۔

انہوں نے ناراضگی کا اظہارکرتے ہوئے کہا " اب جوکراچی کے حالات ہیں اس میں بلا بھی ٹوٹ گیا، تیر بھی نشانےسے چھوٹ گیا پتنگ بھی کٹ گئی اور ڈولفن اورشیر بھی ڈوب کے مرگئے"۔ جمہوریت میں طاقت کا سرچشمہ عوام ہوتی ہے اور یہ ان کی بہتری کیلئے ہوتی ہے نہ کہ آپ کی عیاشی کیلئے"۔

بجلی کے شدید بحران پرسوال اٹھاتے ہوئے گلوکار نے کہا کہ کے الیکٹرک نجی ادارہ ہے، کچھ کہو تو سوشل میڈیا پردفاع کرنے والے اٹھ کھڑے ہوتے ہیں کہ 4 فیصد منافع کماتے ہیں حالانکہ گزشتہ سال انہوں نے بلینزمیں منافع کمایا تھا۔ کے الیکٹرک سے سے سوال ہے کہ آپ کو توتاریں انڈرگراونڈ کرنا تھیں، سسٹم اپ گریڈ کرنا تھا لیکن آپ تو 40 ملی میٹرر کی بارش میں بحلی بند کردیتے ہیں۔ کراچی کے مہنگے ترین علاقے اور سندھ کے پسماند ہ علاقوں میں کوئی فرق نہیں۔ ہمیں ٹرک کی بتی کے پیچھے لگایا ہوا ہے، ہرکوئی کہتا ہے ہم نہیں فلاں ادارہ ذمہ دار ہے۔

مانی کا کہنا تھا کہ سوشل میڈیاپرتبدیلی آنے سے پہلے بھی آوازاٹھارہے تھے اور اب بھی اٹھارہے ہیں۔ کوشش کی تھی کہ کچھ نیا ہوجائے لیکن سب ویسے کا ویسے پرانا ہی رہا ، اب ایک موٹربوٹ لینا رہ گئی تھی وہ بھی لے لیں گے کیونکہ پانی تو بھرنا ہی ہے۔ پینے اور نہانے تک کا پانی تو ہم خریدتے ہیں تو جب سب کچھ خود کرنا ہے تو پھر ہم ووٹ کیوں دیتے ہیں، اب سے وہ بھی نہیں دینا چاہیے۔

انہوں نے کہا کہ سندھ گورنمنٹ سے پوچھیں تو وہ کہتی ہے ایم کیو ایم کا کام ہے، ان سے پوچھو تو کہتے ہیں ہمارے پاس اختیارات نہیں ہیں، وفاقی حکومت سے پوچھو تو وہ کہتے ہیں ہماراتعلق ہی نہیں ہے۔ کرونا میں چھٹیاں ہی چھٹیاں تھیں تو اب بھی شہر 3 دن کیلئے بند کردیتے۔ اب دھوپ نکلنے کا انتظار کیا جارہا ہے۔

اداکار نے یہ انکشاف بھی کیا کہ وہ جعلی اکاونٹس بنا کر حکمرانوں کو گالیاں دے دے کر بھی تھک گئے ہیں۔

کراچی سے تعلق رکھنے والے صدر عارف علوی کی حالیہ خاموشی پربات کرتے ہوئے مانی نے کہا کہ ایک انچ کی بارش میں موٹربوٹ لیکر نکلے تھے وہ کدھرہیں؟دکھاوے کیلئے ہی آجائیں، ایم کیوایم کاتواختتام پوگیا لیکن دیگرجماعتیں تو ہیں نا؟ ایم این ایز کدھر ہیں؟ پی ٹی آئی تو کراچی میں سب سے بڑی جماعت ہے۔

اداکار نے کہا کہ موچیوں کے ہاتھ میں ہارٹ پمپ دیں گے تو کیا ہوگا؟ انہوں نے موچیوں کے ہاتھ میں شہر دے دیا ہے۔

فخرعالم نے مزید کہا کہ جمہوریت کو سوشل میڈیا پرلانچ کررہے ہیں، پی پی کے ووٹرز پوچھیں کہ ہم نے آپ کو ووٹ دیا تو آپ نےہمارے لیے کیا کیا۔ حقیقی مسائل اختیارات کی جنگ نہیں، وہ مرحلہ گزرگیا۔ اب موسمیاتی تبدیلی انتہائی خطرناک حقیقت ہے۔ پاکستان کو عالمی ادارہ 10 سال سے خبردارکررہا ہے اوراب اثرات آپ دیکھ رہے ہیں، اگلے سال کیا کریں گے؟کنٹونمنٹ بورڈ نے کتنے پمپ خرید لیے ہیں٫ یہاں تو نالوں کی صفائی کی جنگ لگی ہے، کراچی کا معاملہ نالوں کی صفائی سے حل نہیں ہوگا، نااہلوں کی بھی صفائی کرنی پڑے گی۔

Fakhr-e-Alam

NAYA DIN

Mani

Tabool ads will show in this div