مویشی منڈی کے قریب غیرقانونی چیک پوسٹ دوبارہ قائم

بیوپاریوں سے کروڑوں بٹورنے کا سلسلہ جاری
[video width="640" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2020/07/Illegal-Check-Post-Khi-Pkg-02-07-Hasan.mp4"][/video]

کراچی میں مویشی منڈی کے قریب غیرقانونی چیک پوسٹ ایک بار پھر بن گئی جہاں مویشیوں کو ہیلتھ سرٹیفکیٹ دینے کے نام پر تاجروں اور عوام سے کروڑوں روپے بٹورے جارہے ہیں۔

شہریوں کو ایک اور فراڈ سے بچانے کے لئے ٹیم سما نے سپرہائی وے کا رخ کیا جہاں پنجاب اور سندھ سے مویشی منڈی میں فرخت کے لئے جانور لانے والے بیوپاریوں کو لوٹنے کا سلسلہ جاری ہے۔

سپرہائی وے لکی سمنٹ کے قریب جیسے ہی مویشی سے بھرا ٹرک آیا۔ سڑک کے کنارے پر کرسی لگائے شخص نے ٹرک ڈرائیور کو سائڈ میں لگانے کا اشارہ کیا جب سما کی ٹیم پہنچی تو کچھ لوگوں نے موٹرسائیکل اسٹار کی اور روانہ ہوگئے۔

ٹیم سماء کے اصرار کرنے پر یہاں موجود عملہ کیمرے پر ٹھیکے کے دستاویزات دکھانے پر تو رضا مند ہوا مگر واپس خالی ہاتھ ہی آیا۔ چوکی پر ہیلتھ کلیرنگ سرٹیفکیٹ کے نام پر فی جانور 150 روپے وصول کیے جارہے ہیں لیکن نہ جانے یہاں موجود ڈاکٹرز کے پاس کیسی جادوئی طاقت ہے کہ وہ دور سے دیکھ کر ہی جانور کو صحت مند قرار دے دیتے ہیں۔

منڈی میں آنے والے بیوپاری بھی اس چال بازی سے بہت پریشان ہیں۔ یہاں گزشتہ سال بھی یہی چیک پوسٹ لگائی گئی تھی جس سندھ کے محکمہ اینٹی کرپشن نے چھاپہ مارکر متعدد افراد کو حراست میں لیا تھا۔

Tabool ads will show in this div