متحدہ کا ٹارگٹ کلر گرفتار، 100 سے زائد قتل کاانکشاف

اسلحہ دستی بم برآمد
Jun 27, 2020
[caption id="attachment_1964551" align="aligncenter" width="800"] فوٹو: آن لائن[/caption]

کراچی پولیس کے اسپیشل انویسٹی گیشن یونٹ (ایس آئی یو) نے کارروائی کرتے ہوئے ایم کیو ایم لندن کے ٹارگٹ کلر کو گرفتار کرلیا۔ ملزم شکیل پر شہر میں 100 سے زائد افراد کے قتل کا الزام ہے۔

ایس ایس پی عرفان بہادر ہفتے کی شام نیوز کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ اورنگی ٹاؤن میں کارروائی کے دوران ایم کیو ایم لندن کا ٹارگٹ کلر شکیل گرفتار ہوا ہے۔ ملزم کے قبضے سے غیرقانونی اسلحہ اور دستی بم برآمد کیا گیا۔

عرفان بہادر نے کہا کہ ملزم شکیل عرف ہڈی ایم کیو ایم لندن کے ڈیتھ اسکواڈ کا سرگرم کارکن ہے۔ ملزم کے ساتھیوں میں اجمل عرف پہاڑی، سعید عرف بھرم، دانش عرف ماما، عمر عرف ملا، ذیشان عرف دادا اور دیگر 32 ٹارگٹ کلرز شامل ہیں۔ ملزم کے خلاف دہشت گردی اور قتل سمیت دیگر نوعیت کے درجنوں مقدمات شہر بھر کے تھانوں میں درج ہیں۔

ایس ایس پی کے مطابق گرفتار ملزم نے دوران تفتیش انکشاف کیا ہے کہ وہ ایم کیو ایم کی اعلیٰ قیادت کے حکم پر ساتھیوں کی مدد سے کراچی میں انویسٹی گیشن افسر، پولیس اہلکار، قطر اسپتال کے ایم ایل او اور تاجروں سمیت لسانی، مذہبی، سیاسی اور فرقہ وارانہ ٹارگٹ کلنگ کی 100 سے زائد وارداتوں میں ملوث رہا ہے۔

ملزم نے اعتراف کیا ہے کہ اس نے 2011 میں پیر آباد تھانے کی انویسٹی گیشن پولیس کے سب انسپکٹر علیم شاہ اور اورنگی ٹاؤن تھانے میں تعینات پولیس اہلکار کانسٹیبل رانا سہیل کو شہید کیا۔ ملزم عوامی نیشنل پارٹی کے رہنما بشیر جان پر قاتلانہ حملے اور شاہ فیصل کالونی کے انچارج نبی خان سمیت درجنوں کارکنوں کو ٹارگٹ کلنگ کا نشانہ بنانے میں ملوث ہے۔

ملزم شکیل نے اورنگی ٹاؤن میں واقع قطر اسپتال کے ایم ایل او ڈاکٹر محمد عرفان اور تھانہ اورنگی ٹاون کے علاقے میں ایم کیو ایم حقیقی کے آصف ملنگ کو ان کی رہائش گاہ میں قتل کرنے کا اعتراف کیا ہے۔ ملزم آستانہ خالد بابا میں آتشزدگی میں بھی ملوث ہے جس میں 3 افراد جھلس کر جاں بحق ہوگئے تھے۔

TARGET KILLER

Tabool ads will show in this div