بھارتی ایجنڈے سے خطے کا امن وسلامتی تباہ ہوجائیگی، وزیرخارجہ

بیس بھارتی فوجیوں کی ہلاکت غیرمعمولی واقعہ ہے، شاہ محمودقریشی
Jun 17, 2020

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ بھارت کے ہندوتوا اور انتشار پھیلانے کے ایجنڈے سے خطے کا امن اور سلامتی تباہ ہوجائے گا، جب يکطرفہ ايکشن ليں گے تو لائن آف ايکچول کنٹرول اور لائن آف کنٹرول پر تنازع کھڑا ہوگا، 5 اگست کو بھارت کے يکطرفہ اقدامات پر پاکستان اور چين کو اعتراض ہے اور رہے گا۔

ریڈیو پاکستان کے مطابق آج (بدھ) اپنے ایک بیان میں وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ چین نے بھارت کے ساتھ سرحدی تنازع کو پُرامن طریقے سے حل کرنے کی حتی الامکان کوشش کی تاہم بھارت نے چین کے تحفظات مسترد کرتے ہوئے متنازع علاقے میں تعمیر جاری رکھی۔ اس ماہ کی نو تاریخ کو بھارت کے انتشار نے لڑائی کو ہوا دی جو خونریز جھڑپ میں تبدیل ہوگئی۔

ان کا کہنا ہے کہ لداخ میں چین کے ساتھ جھڑپ میں بھارت کے 20 فوجیوں کے ہلاک ہونے کی اطلاع ہے جو ایک غیرمعمولی واقعہ ہے، جو بھارتی حکومت کے ہندوتوا فلسفے کے باعث رونما ہوا۔

شاہ محمود قریشی نے مزید کہا کہ چین کا اصولی مؤقف ہے کہ تبت اور لداخ کا 3500 کلومیٹر طویل علاقہ چین اور بھارت کے درمیان متنازع علاقہ ہے اور اگر بھارت یہ سمجھتا ہے کہ وہ اس پر قبضہ کرلے گا تو یہ چین کیلئے قابل قبول نہیں ہوگا۔

ان کا کہنا ہے کہ اگر بھارت یہ سمجھتا ہے کہ وہ اپنے جارحانہ رویے سے کسی کو بھی دباؤ میں لے آئے گا تو یہ اس کی غلط فہمی ہے، پاکستان نے گزشتہ سال 5 اگست کو بھارت کے یکطرفہ اقدامات مسترد کردیے اور چین نے بھی ان اقدامات پر اعتراضات اٹھائے تھے۔

 وزیر خارجہ نے کہا کہ پاکستان ایک امن پسند ملک ہے اور خطے میں امن کا خواہاں ہے۔ افغانستان کے بارے میں ان کا کہنا ہے کہ افغان امن عمل کیلئے ہماری کوششیں دنیا کے سامنے ہیں۔

دوسری جانب سماء کے پروگرام نیا دن میں گفتگو کرتے ہوئے وزير خارجہ شاہ محمود قريشے نے کہا کہ بی جے پی کی ہندوتوا سوچ والی سرکار کی ہٹ دھرمی ختم نہيں ہورہی، جب يکطرفہ ايکشن ليں گے تو لائن آف ايکچول کنٹرول اور لائن آف کنٹرول پر تنازع کھڑا ہوگا، 5 اگست کو بھارت کے يکطرفہ اقدامات پر پاکستان اور چين کو اعتراض ہے اور رہے گا۔

CHINA

Tabool ads will show in this div