اسلام آباد:کاون ہاتھی کےمستقبل کےفیصلےکیلئےکمیٹی کی تشکیل

کمیٹی 3 ہفتوں کے اندرحتمی فیصلہ کرے گی

اسلام آباد کے چڑیا گھر میں موجود کاون ہاتھی کے مستقبل کے فیصلے کے لئے 8 رکنی کمیٹی تشکیل دے دی گئی۔ کمیٹی 3 ہفتوں کے اندرحتمی فیصلہ کرے گی،اگرکمیٹی اس نتیجے پر پہنچی کہ پاکستان میں ہاتھی کیلئے سازگار ماحول والی پناہ گاہ بنانا ممکن نہیں تو کاون کو بیرون ملک بھیجنے کا مناسب وقت طے کیا جائےگا۔

کاون ہاتھی کی مرغزار چڑیا گھر سے رہائی کےعدالتی حکم نامے کے بعد ایک اور فیصلے کی گھڑی آگئی۔36سال تک اسلام آباد میں بچوں کا دل بہلانے والے ہاتھی کے مستقبل کےفیصلے کے لئے وائلڈ لائف مینجمنٹ بورڈ نے 8 رکنی کمیٹی تشکیل دے دی۔ نوٹیفکیشن اسلام آباد ہائیکورٹ میں جمع کرا دیا گیا۔

نوٹیفکیشن کے مطابق کمیٹی جائزہ لے گی کہ کیا کاون کے لئے پاکستان میں کوئی سازگار ماحول والی پناہ گاہ بنائی جا سکتی ہے؟اگر نہیں تو پھر ہاتھی کو کون سے ملک میں اور کس وقت منتقل کیا جائے ؟ کمیٹی 3 ہفتوں کے اندر حتمی فیصلہ کرے گی۔کمیٹی یہ بھی فیصلہ کرے گی کہ عالمی معیار کے مطابق اسلام آباد میں چڑیا گھر کی تعمیر ہونے تک مرغزار کے دیگر جانور کہاں رکھے جائیں گے۔

واضح رہے کہ اسلام آباد ہائیکورٹ نے21 مئی کو ناکافی سہولیات کے باعث مرغزار چڑیا گھر سے کاون سمیت تمام جانوروں کو رہا کرنے کا حکم دیا تھا۔ عدالت نے ہاتھی کی محفوظ پناہ گاہ میں منتقلی کے لئے ایک ماہ جبکہ دیگر جانوروں کے لئے 60 دن کی مہلت دی تھی۔

عدالت نے قرار دیا تھا کہ کاون نے 3 دہائیوں سے حکومتی بے حسی کے باعث بہت سختیاں برداشت کرلیں، اب اسے رہا کیا جانا چائیے۔

کاون کی منتقلی کے حکم پرامریکی گلوکارہ پاکستان کی شکرگزار

پچھلے ماہ کاون کے حق میں آواز اٹھانے والوں میں پیش پیش امریکی گلوکارہ شیرنے سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر کئی ٹویٹس کی تھیں  عدالتی فیصلے پر خوشی کا اظہارکرتے ہوئے یہ بھی لکھا کہ ’’میں حکومتِ پاکستان کا شکریہ ادا کرنا چاہتی ہوں ‘‘۔

اس پورے عمل میں فری دی وائلڈ نامی عالمی این جی اوکے سربراہ مارک کون کاون کی آزادی کیلئے کوشاں رہے جو 2017 میں پاکستان بھی آئے تھے۔

شیر کے ساتھ کام کرنے والے مارک کون کا کہنا تھا کہ شدید ذہنی دباؤ کا شکارکاون کی اسلام آباد کے چڑیا گھرمیں اس کی دیکھ بھال ٹھیک نہیں ہو رہی اور کمبو ڈیا وائلڈ لائف پارک کاون کو وصول کرنے کے لیے تیارہے۔ اس کی منتقلی کے تمام اخراجات فری دی وائلڈ برداشت کرے گی جبکہ بدلے میںچڑیا گھر کی انتظامیہ کو عالمی معیار کی ٹریننگ دی جائے گی۔

امریکی گلوکارہ نے اسلام آباد کے میئرکو ایک خط لکھ کرکہا تھا کہ کاون کو ہمیں دے دیں، کمبوڈیا میں اس کا علاج معالجہ کرایا جائے گا کیونکہ اس کی ذہنی بیماری بڑھتی جارہی ہے۔ کاون کوکمبو ڈیا لے جانے کیلئے ساراخرچ بھی تنظیم برداشت کرے گی۔

امریکی گلوکارہ نے اپنی ٹویٹ میں کاون کی رہائی کیلئے خصوصی طور پر مارک کا شکریہ بھی ادا کیا۔

kawan

Tabool ads will show in this div