آئل کمپنیوں کے پاس 5روز کااسٹاک رہ گیا، پیٹرولیم ڈیلرز

بحران سے شہری اور ٹرانسپورٹرز دونوں پریشان
فوٹو : آن لائن
فوٹو : آن لائن
فوٹو : آن لائن

کراچی سميت ملک بھر ميں پيٹرول اور ڈيزل کا بحران شدت اختيار کرتا جارہا ہے۔ چيئرمين آل پاکستان پيٹروليم اينڈ سی این جی ڈٰيلرز نے دعویٰ کيا ہے کہ آئل کمپنيوں کے پاس صرف 5 روز کا اسٹاک باقی رہ گيا ہے۔

کراچی سمیت ملک بھر میں پیٹرول اور ڈیزل کا بحران شدت اختیار کرتا جارہا ہے، چیئرمین آل پاکستان پیٹرولیم اینڈ سی این جی ڈیلرز ایسوسی ایشن کا دعویٰ ہے کہ آئل کمپنیوں کے پاس صرف 5 روز کا اسٹاک رہ گیا۔

چیئرمین پیٹرولیم ریٹیلرز سندھ سمیر نجم الحسن کا کہنا ہے کہ مختلف شہروں ميں بيشتر پمپس بند پڑے ہيں، جہاں سپلائی آرہی ہے وہ بھی ناکافی ہے۔

کراچی کے جن پیٹرول پمپس پر فيول نہيں وہاں سناٹا پڑا ہے، یہی وجہ ہے کہ جن کا ميٹر آن ہے وہاں رش لگا ہے جس کے باعث شہری بھی پریشانی میں مبتلا ہیں۔

صارفین کا کہنا ہے کہ کوئی بحران نہیں سب ڈرامہ ہے، مافیا جان بوجھ کر مصنوعی بحران پیدا کررہی ہے تاکہ پیٹرول دوبارہ مہنگا کردیا جائے۔

پيٹرول اور ڈیزل کی قلت سے ایک طرف عوام پریشان ہے تو دوسری طرف گڈز ٹرانسپورٹ مالکان بھی اذیت سے دوچار ہیں، فیول کارڈ استعمال کرنے والے 50 فیصد ٹرانسپورٹرز پريشان ہيں۔

ٹرانسپورٹرز کا کہنا ہے کہ پی ایس او سے پيٹرول نہیں ڈلوا سکتے، پرائیویٹ کمپنیوں کے کارڈ کے ذریعے فلنگ ممکن ہے، لاکھوں روپے کا فيول فلیٹ کارڈ کے ذریعے بھرواتے ہیں۔

Tabool ads will show in this div