بھارت میں پاکستانی ہائی کمیشن کے 2افسران کوملک چھوڑنے کاحکم

جاسوسی کی سرگرمیوں میں ملوث قرار دیا گیا
Jun 01, 2020
نئی دہلی میں واقع پاکستانی ہائی کمیشن۔ فوٹو: اے ایف پی
نئی دہلی میں واقع پاکستانی ہائی کمیشن۔ فوٹو: اے ایف پی
[caption id="attachment_1942021" align="alignnone" width="804"] نئی دہلی میں واقع پاکستانی ہائی کمیشن۔ فوٹو: اے ایف پی[/caption]

بھارت نے نئی دلی ميں پاکستانی ہائی کميشن کے 2 افسران کو جاسوسی کی سرگرمیوں میں ملوث قرار دے کر 24 گھنٹے ميں ملک چھوڑنے کا حکم دے دیا۔

بھارتی وزارت خارجہ کے مطابق حکومت نے ان دونوں عہدے داروں کو سفارتی مشن کے ممبر کی حیثیت سے غیر موزوں سرگرمیوں میں ملوث ہونے پر ناپسندیدہ قرار دیا ہے۔

دونوں افسران کا یکم جون کو کسی وقت وطن واپس آنے کا امکان ہے۔

پاکستان کی وزارت خارجہ نے بھارتی اقدام کی شديد الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ نئی دہلی میں پاکستانی ہائی کمیشن کے دو افسران کو بھارتی حکام نے 31 مئی 2020 کو غلط اور بےبنیاد الزامات لگا کر حراست میں لیا تھا۔

تاہم، دونوں افسران کو پاکستانی ہائی کمیشن کی مداخلت پر رہا کیا گیا تھا۔ وزارت خارجہ نے کہا کہ افسران کو نظربند کرنے اور تشدد کے ساتھ ساتھ سفارتی عہدیداروں کو دھمکی اور دباؤ کی بھی مذمت کرتے ہیں۔

پاکستان نے بھارتی اقدام کو سفارتی تعلقات پر ویانا کنوینشن کی خلاف ورزی قرار دیا ہے۔

Tabool ads will show in this div