راجہ پرویز کے فنڈز کی تقسیم غیرقانونی قرار

Nov 30, -0001

اسٹاف رپورٹ

اسلام آباد: سپریم کورٹ نے سابق وزیراعظم راجہ پرویز اشرف کی جانب سے ترقیاتی فنڈز کی تقسیم غیرقانونی قراردے دی ۔۔

قومی خزانے کو سینتالیس ارب روپے کا ٹیکہ لگانے پر ۔۔ پیپلزپارٹی کے رہنما سمیت دیگر افراد کے خلاف سول اور فوجداری کارروائی کا حکم دے دیا ۔

عدالتی فیصلے میں انکشاف ہوا ہے کہ راجہ جی نے  ۔۔ لواری ٹنل ، بھاشا ڈیم اور ایچ ای سی کے ترقیاتی فنڈزمن پسند افراد اور ارکان پارلیمنٹ کو جاری کئے ۔۔ اسلام آباد سے خالد عظیم کی رپورٹ
 
چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری نے سابق وزیراعظم کے صوابدیدی فنڈ ازخود نوٹس کا 22 جولائی کو محفوظ کیا گیا فیصلہ سنایا ۔ عدالتی فیصلے میں کہا گیا ہے کہ سابق وزیراعظم نے اپنے اختیارات سے تجاوز کیا اور اقتدار کے آخری دنوں میں 47 ارب کے فنڈز تقسیم کئے، راجہ پرویز اشرف نے لواری ٹنل، بھاشا ڈیم اور ایچ ای سی کے ترقیاتی فنڈز من پسند افراد اور ارکان پارلیمنٹ کو جاری کئے۔

عدالتی فیصلے میں کہا گیا ہے کہ انتظامیہ صوابدیدی گرانٹس بھی من مانے انداز میں استعمال نہیں کرسکتی، آئین وزیراعظم یا وزیراعلیٰ کی محض صوابدید کے مطابق ارکان پارلیمنٹ کو رقوم دینے کی اجازت نہیں دیتا، اگر ایسی کوئی رقم مختص کی گئی تو یہ غیر قانونی اور غیر آئینی ہے، عدالت نے راجہ پرویز اشرف کی جانب سے ترقیاتی فنڈز کی تقسیم غیر قانونی قرار دیتے ہوئے سابق وزیراعظم اور دیگر افراد کے خلاف سول اور فوجداری کارروائی کا حکم دے دیا،

عدالت نے بلوچستان کے ترقیاتی فنڈز سے متعلق بھی محفوظ شدہ فیصلہ جاری کیا، عدالت کا کہنا ہے کہ عوام کے مفاد میں جو منصوبے ہیں وہ جاری رکھے جائیں، جو عوامی مفاد میں نہیں ہیں مجاز اتھارٹی کی مدد سے ترمیم یا تبدیل کیا جائے،

کی

کے

کشمیر

river

Tabool ads will show in this div