کرونا وائرس: اڈیالہ جیل کے 408قیدیوں کی مشروط ضمانت منظور

معاملے پر کمیٹی بھی تشکیل دے دی گئی
[caption id="attachment_1738777" align="alignnone" width="758"] فوٹو: اے ایف پی[/caption]

کرونا وائرس کے بڑھتے خطرات کے پیش نظر اسلام آباد ہائی کورٹ نے اڈیالہ جیل کے 408 قیدیوں کی مشروط ضمانت منظور کرلی۔

منگل 24 مارچ کو کرونا سے بچاؤ کےلیے قیدیوں کی رہائی کے کیس کی سماعت ہوئی جس میں معمولی جرائم کے قیدیوں کو مشروط ضمانت دی گئی۔

چیف جسٹس اطہر من اللہ نے ریمارکس دیے کہ پوری دنیا میں جیلوں سے لوگوں کو رہا کیا جا رہا ہے۔ جیل میں گنجائش سے زیادہ قیدیوں کی موجودگی میں ’’سماجی فاصلے‘‘ کی پالیسی پر عمل ممکن نہیں۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ موجودہ صورتحال میں خواتین کو بھی جیل میں رکھنا ٹھیک نہیں اور بحرانی صورتحال میں بڑے فیصلے کرنے ہوتے ہیں۔ کیوں نہ پر تشدد نوعیت کے مقدمات کے علاوہ دیگر تمام قیدیوں کو ضمانت پر رہا کر دیا جائے۔

ڈی سی اسلام آباد نے بتایا کہ اڈیالہ جیل سے آج 307 قیدیوں کو رہا کر دیا جائے گا۔

ایڈووکیٹ جنرل اسلام آباد نے کہا کہ منشیات کیسز کے ملزمان کے رہا ہونے پر معاشرے کو خطرہ ہوتا ہے جس پر عدالت نے انتظامیہ، پولیس اور اے این ایف کے نمائندوں پر مشتمل کمیٹی تشکیل دیدی۔

قیدی اپنی ضمانت اور رہائی ملنے پر فرار نہ ہونے سے متعلق کمیٹی کو مطمئن کریں گے تو ہی رہائی ملے گی۔

ISLAMABAD HIGH COURT

Tabool ads will show in this div