زائرین کو اُنکے صوبوں میں بھیجنا شروع کردیا، وزیراعلیٰ بلوچستان

کم وسائل کے باوجود چیلنج سے نمٹنے کی کوشش کی
Mar 14, 2020
فائل فوٹو
فائل فوٹو
[caption id="attachment_1874537" align="alignnone" width="1024"] فائل فوٹو[/caption]

وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال خان کہتے ہیں کہ ایران سے آنیوالے زائرین کو طے شدہ حکمت عملی کے تحت ان کے صوبوں میں بھجوایا جارہا ہے، کم وسائل کے باوجود اس چیلنج سے نمٹنے کی کوشش کی۔

وزیراعلی بلوچستان جام کمال خان کی زیر صدارت اہم اجلاس ہوا جس میں صوبے میں کرونا وائرس کی روک تھام کیلئے اقدامات کا جائزہ لیا گیا۔

اجلاس کے دوران سیکریٹری صحت نے بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ محکمہ صحت کے پاس 200 ٹیسٹنگ کٹس موجود ہیں، کل تک 34 ٹیسٹ کئے گئے ہیں، تاہم اب تک کرونا کا کوئی سیریس کیس سامنے نہیں آیا، شیخ زید اور فاطمہ جناح اسپتال میں آئیسولیشن وارڈ قائم کردیئے گئے ہیں، جہاں وینٹی لیٹر اور دیگر سہولیات دستیاب ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ دوسرے صوبوں کے زائرین کو طے شدہ حکمت عملی کے تحت ان کے صوبوں میں بھیجنا شروع کر دیا ہے، بلوچستان نے زائرین کے حوالے ذمہ داری اٹھائی اور نبھائی۔

جام کمال خان کہتے ہیں کہ حکومت بلوچستان نے کرونا کے مسئلے کو پہلے دن سے سنجیدگی کے ساتھ لیا، کم وسائل کے باوجود اس چیلنج سے نمٹنے کی کوشش کی، کرونا وائرس قومی مسئلہ ہے اور اس سے نمٹنا مشترکہ سماجی ذمہ داری ہے۔

تفتان میں 7 زائرین میں کرونا وائرس کی تشخیص ہوچکی ہے جبکہ ملک بھر میں مہلک مرض سے متاثرہ افراد کی تعداد 31 تک پہنچ گئی، کراچی میں 17 مریضوں میں سے 2 صحتیاب ہوچکے ہیں۔

Tabool ads will show in this div