قبائلی اضلاع کے خاصہ دار، لیویز فورس پولیس میں ضم

اعلامیہ جلد جاری ہوگا

خیبر پختونخوا پولیس کے انسپکٹر جنرل ( آئی جی) ثناء اللہ عباسی نے کہا ہے کہ قبائلی اضلاع کے 9 ہزار خاصہ دار اور لیویز کو پولیس میں ضم کردیا گیا ہے۔ صوبائی کابینہ منظوری دے چکی ہے۔ اس کا اعلامیہ بھی اسی ہفتے جاری ہوجائے گا۔

بنوں پولیس لائن میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے انسپکٹر جنرل نے کہا کہ انضمام کے بعد پہلی مرتبہ قبائلی عوام کو آزادی ملی ہے اور بنیادی انسانی حقوق ملے ہیں۔ بنیادی حقوق ہی سب کچھ ہیں۔

یہ بھی پڑھیں: لال مسجد آپریشن سے پہلے حامد میر اور مشرف کی ملاقات میں کیا ہوا

انہوں نے کہا کہ پولیس میں ضم ہونے والے لیویز اور خاصہ داروں پر خصوصی توجہ رہے ہیں اور انہیں بھی پولیس کے برابر مراعات دے رہے ہیں۔ ان کیلئے 450  ملین روپے جاری کئے جائیں گے جس پر سب ڈویژنوں میں زمینیں خرید کر تھانہ جات بنائے جائیں گے اور مزید انفراسٹراکچر بھی قائم کیا جائے گا۔

ثناء اللہ عباسی نے کہا کہ فی الحال انفرا اسٹرکچر نہ ہونے کے پولیس نے ایف آئی اور روز نامچہ شروع کیا ہے۔ ملزمان گرفتاریاں بھی ہو رہی ہیں اور انتظامیہ متحرک ہے۔

انہوں نے کہا کہ قبائلی لوگ بڑے مہمان نواز اور محب وطن ہیں۔ دہشت گردی کے خلاف فرنٹ لائن پر لڑے۔ ان کی قربانیاں ناقابل فراموش ہیں۔

Levies Force

Tabool ads will show in this div