بچوں کےساتھ زیادتی کےمجرمان کوسرعام سزائےموت کی قراردادمنظور

پی پی پی کی سرعام سزائے موت کی مخالفت
Feb 07, 2020
[video width="640" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2018/02/FW-NA-Resolution-Passed-PKG-07-02-RAHEEL.mp4"][/video]

قومی اسمبلی میں بچوں کے ساتھ زیادتی کے مجرمان کو سرعام سزائے موت دینے کی قرارداد کثرت رائے سے منظورکرلی گئی۔ وزیرمملکت علی محمد خان نے قرارداد پیش کی۔

جمعہ کو قومی اسمبلی میں وزیر مملکت علی محمد خان نےبتایا کہ بچوں سے زیادتی کے مجرمان کے لئے وزیر اعظم سزائے موت چاہتے ہیں، جب زینب الرٹ بل قومی اسمبلی کی انسانی حقوق کمیٹی میں پیش کیا گیا اور بچوں سے زیادتی کے ملزمان کو سزائے موت کا مطالبہ آیا تو اس کی مخالفت کی گئی، حکومت اب بھی بچوں سے زیادتی کے ملزمان کو سزائے موت کا قانون بنانا چاہتی ہے۔

علی محمد خان نے سوال کیا کہ اپوزیشن بتائے کہ وہ بچوں سے زیادتی کے ملزمان کو سزائے موت کے بل کی حمایت کرنے کو تیار ہے، این جی اوزسرعام سزائے موت کی مخالف ہے۔

پی پی پی نے بچوں سے زیادتی کے مجرمان کی سرعام سزائے موت کی مخالفت کردی۔ راجہ پرویز اشرف نے بتایا کہ پاکستان اقوام متحدہ کے چارٹر پر دستخط کرچکا ہے،دنیا اسے قبول نہیں کرے گی۔راجہ پرويز اشرف نے مزید کہا کہ سزائيں بڑھانے سے جرائم کم نہيں ہوں گے۔

ڈپٹی اسپيکرقومی اسمبلی نے قرار داد منظوری کا اعلان کيا۔

Tabool ads will show in this div