سندھ میں تنوع کے باوجود اتحاد برقرار ہے

کراچی آرٹس کونسل میں ادب فیسٹیول کا ایک سیشن
Feb 03, 2020

[video width="640" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2018/01/Adab-Unity-01.mp4"][/video]

کراچی کے آرٹس کونسل میں جمعہ کو ادب فیسٹول 2020 کے پہلے روز ایک سیشن کے شرکاء نے اتفاق کیا کہ صوبے میں زبان اور ثقافت کے تنوع کے باوجود لوگوں کا آپسی اتحاد برقرار ہے اور یہی یکجہتی ترقی و خوشحالی کا ذریعہ ہے۔

گفتگو کا عنوان 'سندھ میں تنوع یا اتحاد' تھا جو قدرے مبہم تھا جس کا ادراک خود پروگرام کی ناظم مہتاب راشدی کے علاوہ مزید 3 شرکائے گفتگو کو بھی تھا۔ کچھ کا خیال تھا کہ اگر 'سندھ میں تنوع اور اتحاد' ہوتا تب بھی باتوں کا دائرہ متعین ہوجاتا۔

سندھی زبان کے شاعر شاھ محمد پیرزادہ نے کہا کہ سندھ میں اگر کہیں زبان، کلچر اور جغرافیائی بنیادوں پر تھوڑا بہت فرق ہے بھی تو انہیں لگتا ہے کہ یہ ایک مخصوص ٹولے کی معاشی منفعت سے منسلک ہے جو یہاں کی خصوصاً دو بڑی برادریوں (سندھی اور اردو اسپیکنگ) میں فاصلے بڑھانے کیلئے کوشاں رہتا ہے۔

ماہر تعلیم اظہار سومرو کا کہنا تھا کہ سندھ میں صدیوں پہلے بھی لوگ باہر سے ہی آکر آباد ہوئے بالکل اسی طرح قیام پاکستان کے موقع پر بھی لوگ یہاں آئے لہزا اس تنوع کے باوجود باہمی اتحاد متاثر نہیں ہوا۔ انہوں نے کہا کہ سندھی بولنے والے اپنی مہمان نوازی پر آج بھی قائم ہیں۔

اردو اور سندھی کی ادیبہ عطیہ داؤد نے کہا کہ ہم جس برادری اور زبان بولنے والوں میں جنم لیتے ہیں وہ ہمیں سب سے افضل لگتے ہیں۔ انہوں نے سندھی اور اردو دونوں ادبی حلقوں سے شکایت کی کہ ایک مجھے دوسری زبان کا رائٹر سمجھتا ہے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ انہوں نے 9 کتابیں اردو اور انگریزی جبکہ ایک سندھی میں لکھی ہیں لیکن اردو اور سندھی میں سے کوئی بھی حلقہ مجھے قبول نہیں کرتا۔

اس پروگرام کے شرکاء کو کچھ اور بھی ہلکی پھلکی محبت بھری شکایات تھیں لیکن چوںکہ دوسرا 'مکتب فکر' گفتگو میں تھا ہی نہیں اس لئے سماء ڈیجیٹل نے وہ شکایات شامل نہیں کیں۔

ماہرعمرانیات مسعود لوہارنے بھی گفتگو میں حصہ لیا۔ اس موقع پر گلوکار سیف سمیجو نے منافرت کے خلاف ایک گیت سنایا۔

مہتاب راشدی نے گفتگو سمیٹتے ہوئے کہا کہ سندھ میں ہم آہنگی برقرار ہے جہاں تک تنوع کا تعلق ہے وہ ہمیں فطرت سے ملا ہے جس سے مفر نہیں بس بات صرف ایک دوسرے کو قبول کرنے اور حقیقت کے اعتراف کی ہے۔

ADABFEST2020

Tabool ads will show in this div