منطقی انجام تک پہنچانےکاسلسلہ،آرمی چیف نےنودہشتگردوں کی سزائےموت پرمہرثبت کردی

315256-Armycourts-1420217792-828-640x480 راول پنڈی : آرمی چیف جنرل راحیل شریف نے سینگین مقدمات میں ملوث نو دہشت گردوں کی سزائے موت کی توثیق کردی۔ دہشت گردوں کو ان کے منطقی انجام تک پہنچانے کا سلسلہ جاری ہے، پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) کے ڈائریکٹر جنرل میجر جنرل عاصم سلیم باجوہ کی جانب سے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر  پر جاری بیان کے مطابق آرمی چیف جنرل راحیل شریف نے مزید نو دہشت گردوں کی سزائے موت کی توثیق کردی، تمام دہشت گرد سنگین مقدمات میں ملوث تھے، مجرموں کو فوجی عدالتوں سے سزائیں ہوئیں۔ ترجمان کے مطابق ایک دہشت گرد کو عمر قید کی سزا بھی سنائی گئی ہے، دہشت گرد میجر جنرل ثنا اللہ نیازی شہید اور کرنل توصیف شہید پر حملے میں ملوث تھے، جب کہ  سزائے موت پانے والے دہشت گرد نوشہر میں مسجد پر خود کش حملے میں بھی ملوث تھے، دہشت گردوں نے خیبرپختونخوا میں شہریوں اور سیکیورٹی اہل کاروں کو بھی نشانہ بنایا۔ ترجمان کا مزید کہنا ہے کہ سزائے موت پانے والے دہشت گرد مشتونگ میں فرقہ واریت اور قتل کے واقعات میں بھی ملوث تھے، سزا پانے والوں میں سید زمان، عبید اللہ، محمود خان، قاری زبیر محمد، رب نواز، محمد سہیل، محمد عمران، اسلم خان، جمیل الرحمان اور جمشید رضا شامل ہیں۔  سویلین سید زمان کا تعلق حرکت الجہاد اسلامی سے ہے، اسے چھ سپاہیوں کے قتل میں ملوث ہونے پر سزائے موت دی گئی۔  عبیداللہ کو مسلح افواج پر حملے کے جرم میں چھ الزامات کے تحت سزا دی گئی۔ ملزم نے دو جوانوں کو شہید اور اٹھارہ فوجیوں کو زخمی کیا۔ کالعدم ٹی ٹی پی سوات کے محمود کو بھی سزائے موت دی گئی۔ ملزم نے راکٹ لانچر کے ذریعے دو سپاہیوں کو شہید اور تیرہ کوزخمی کیا تھا۔ CPb8OmuVEAA93OW CPb8PxAUcAA1LVg واضح رہے کہ سانحہ آرمی پبلک اسکول کے بعد وزیراعظم نوازشریف نے کل جماعتی کانفرنس میں پھانسی کی سزا بحال کرنے کی منظوری دی تھی جس پر پہلے مرحلےمیں فوجی عدالتوں کے ذریعے سزا یافتہ مجرموں پر  عملدرآمد کیا جارہا ہے۔ پھانسیوں چھ سال سےزائد عائد پابندی ختم ہونے کے بعد اب تک چالیس سے زائد مجرموں کو تختہ دار پر لٹکا کر منطقی انجام تک پہنچایا گیا ہے۔ سماء

ARMY CHIEF

RAHEEL

death warrant

imprisonment

Badaber attack

MILITARY COURT

Tabool ads will show in this div