احسن اقبال نے نيب کو خردبرد ثابت کرنے کاچيلنج دےديا

لیگی رہنما کو لاہور کےسروسز اسپتال سے ڈسچارج کردياگيا
Jan 02, 2020

نیب کے زیر حراست مسلم ليگ ن کے رہنما احسن اقبال کو لاہور کےسروسز اسپتال سے ڈسچارج کر ديا گيا، نیب ٹیم انہيں واپس راولپنڈی لے گئی، احسن اقبال کہتے ہيں کہ اس سے پہلے کہ ہوائوں کا رخ بدلتا حکومت نے نيب کا قانون بدل ديا ليکن انہيں نئے قانون کے تحت کوئی سہولت نہيں چاہيے۔

دو ہزار اٹھارہ ميں احسن اقبال کو گولی لگنے کی وجہ سے ان کے دائیں بازو کی ہڈی ٹوٹ گئی تھی، ڈاکٹروں نے چند روز قبل سرجری کرتے ہوئے بازو کی ہڈی جوڑنے والی پليٹ نکال دی تھی۔

احسن اقبال کو اکتيس دسمبر کو دوبارہ سروسز اسپتال لايا گيا جہاں ڈاکٹرز نے ٹانکے کھول کر انہيں ڈسچارج کرديا۔

راولپنڈی واپسی پر گفتگو کرتے ہوئے احسن اقبال نے نيب کو ايک روپے کی خردبرد يا کک بيکس ثابت کرنے کا چيلنج ديا اور کہا کہ انہوں نے تين ہزار دو سو ارب روپے کے ترقياتی بجٹ کی نگرانی کی۔

انہوں نے کہا کہ سياست ميں آنے اور آج کے دن تک ان کے اثاثوں ميں ايک مرلے کا بھی اضافہ نہيں ہوا، وہ کسی کرپشن کی وجہ سے نيب کے زيرحراست نہيں بلکہ انہيں پيغام ديا گيا تھا کہ اپنی رفتار آہستہ رکھيں۔

Tabool ads will show in this div