کالمز / بلاگ

پنجاب کے حکمرانوں کی ترجیحات اور عوامی مشکلات

Sep 19, 2015
metro

تحریر: محمد علی جڑ

لاہور :  پنجاب پاکستان کا سب سے بڑا صوبہ ہے اورمسائل بھي اتنے ہی بڑے ہيں، حکمران عوام کو درپيش عام مسائل حل کرنے کي بجائے ميگا پراجيکٹس پر زيادہ زور لگا رہے ہيں جو کہ بظاہر ديکھنے ميں تو بہت خوبصورت اور اليکشن مہم ميں بھي کاميابي کے ضامن تصورکئےجاتے ہيں ليکن عوام کوان سے کوئي خاطر خواہ فائدہ نہيں پہنچ رہا۔

جيسا کہ نندي پور پاور پراجيکٹ جوکہ 58 ارب روپے کي لاگت سے بنا ليکن پيدوار نہ ہونے کے برابرہے اسي طرح ميٹروبس سروس 30 ارب روپے سے بني جس سے فائدہ تو چند لاکھ افراد کو ہو رہا ہے ليکن ماہانہ ايک ارب روپے کي سبسڈي بھي دينا پڑرہي ہے يہي صورتحال قائداعظم سولر پارک کي ہے،،،بات يہيں ختم نہيں ہوئي ابھي ملتان ميٹرو بس سروس بھي تکميل کے آخري مراحل ميں ہے، ان بھاري بھرکم منصوبوں سے عواک کو کتنا اورکب ريلف ملے کچھ نہيں کہا جاسکتا ليکن اب تک کے تجربات سب کے سامنے ہيں جن پر خزانہ تو لٹايا گيا ليکن فائدہ کم دکھائي ديتاہے۔

road

دوسري جانب پورے صوبے ميں صحت و تعليم صفائي، نکاسي آب اور سڑکوں اور گليوں کي حالت ناگفتہ بہ ہے، جب کہ اسپتالوں میں مریض زیادہ ہیں، بستروں کی تعداد کم ہے اور ادویات اور مفت ٹیسٹ کی سہولیات بھی میسر نہیں۔

،اس کا اندازہ اس سے لگاياجاسکتا ہے کہ رواں مالي سال کے بجٹ ميں پنجاب بھر کي 788 چھوٹي سکيميں ايسي ہيں کہ جن کيلئے ابھي تک فنڈزکااجراء نہيں ہوسکا جبکہ حکمرانوں کي اولين تجيح لاہوراورنج لائن،سگنل فري کوريڈور،ملتان ميٹروبس،ديہي روڈزپروگرام ،ساہيوال کول پاوراوربہاولپورقائداعظم سولر پارک جيسےميگا پراجيکٹس کيلئے خزانے کے منہ کھول ديئے گئے ہيں، حتي کہ اب تو يہاں تک کوشش ہو رہي ہے کہ تمام چھوٹے منصوبوں کا بجٹ بھي ان ميگا پراجيکٹس پرلگا ديا جائے۔

ميگا پراجيکٹس حکومت کي اولين ترجيح بننے پر بيوروکريسي نے بھي اپنارخ عوام کو درپيش مشکلات اور مسائل سے موڑليا ہے وہ بھي ان کے حل کيلئے مکمل چپ سادھے ہوئے ہيں، يہي وجہ ہے کہ بنيادي مسائل کے حل کيلئے فنڈز کي عدم دستيابي پر عوام کي مشکلات بڑھ گئي ہيں اوران کا کوئي پرسان حال نہيں۔

صوبے ميں صحت اورتعليم کي حالت دگر گوں ہے، حکمرانوں کي ترجيحات بدلنے کے ساتھ ساتھ نااہلي بھي سامنے آرہي ہے، گزشتہ سال ترقياتي کاموں کيلئے 345 ارب روپے رکھے گئے مگر سو ارب روپے سے زائد کي رقم خرچ ہي نہ کي جاسکي جس کي وجہ سے انتہائي اہميت کے حامل منصوبے التواء کا شکار ہوکر رہ گئے ہيں۔

عوامي حلقوں کي رائے ہے کہ حکمران ميگا پراجيکٹس کو اليکشن مہم کا حصہ ضرور بنائيں ليکن اربوں روپے خرچ کرنے کے باوجود ان ميگا پراجيکٹس کا فائدہ عوام کو ضرور پہنچنا چاہيئے۔ سماء

PUNJAB

BUS

bridges

ISSUES

PEOPLE

Tabool ads will show in this div