جوکچھ لاہور میں ہوا اس پرافسوس ہے، چیف جسٹس

سماعت کے دوران ریمارکس

سپریم کورٹ میں مقدمات کی سماعت کے دوران لاہور میں پی آئی سی پر وکلاء کے حملے کا تذکرہ ہوا۔ چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ نے کہا کہ کل جو کچھ لاہور میں ہوا اُس پر ہمیں بہت افسوس ہے۔

بلوچستان حکومت کے ملازمین سے متعلق کیس کی سماعت کے دوران چیف جسٹس نے کہا کہ اداروں کو مضبوط کرنا ہے لیکن پی آئی سی واقعے سے پوری کمیونٹی کو ضرب لگی ہے۔

بنی گالہ تجاوزات سے متعلق کیس میں عدالتی استفسار پر سی ڈی اے کے ممبر پلاننگ نے بتایا کہ4  ارب روپے کی لاگت سے 3 سیوریج ٹریٹمنٹ پلانٹس پر کام شروع کردیا گیا ہے۔ بنی گالہ میں انٹرنل سیوریج نیٹ ورک بنارہے ہیں۔ اسلام آباد کے ماسٹر پلان پر نظرثانی میں 6 سے 8 ماہ کا وقت لگ سکتا ہے۔ عدالتی احکامات کو مدنظررکھا جائے گا۔

جسٹس عمر عطا  بندیال نے ریمارکس دئیے کہ ماسٹر پلان سے متعلق ہم نے رائے دی ہے۔ حکم نہیں۔ اپنا ذہن استعمال کریں یہ نہ ہو کہ پانی نالہ کورنگ کے ذریعے راول جھیل میں چلا جائے۔ ماحول کی بہتری کیلئے بہترین اقدامات کئے جائیں۔

جسٹس عمر عطا  بندیال نے کہا کہ سی ڈی اے بنی گالا میں موجود عمارتوں کو ریگولرائز کرے۔ ایسا نہ ہو کہ چک شہزاد والا حال بنی گالہ میں بھی ہوجائے۔

PIC ATTACK

Tabool ads will show in this div