کراچی میں گذشتہ شب ایس ایچ او شفیق تنولی پربم حملےکی تحقیقات میں کوئی پیشرفت نہیں ہوسکی

اسٹاف رپورٹ


کراچی : کراچی کے علاقے پرانی سبزی منڈی میں گذشتہ شب ایس ایچ او ماڑی پور شفیق تنولی پر بم حملے کی تحقیقات میں اب تک کوئی پیشرفت نہیں ہوسکی ۔۔ تفتیش کاروں کو دھماکے میں ہلاک ہونے والے ایک شخص پر حملہ آور ہونے کا شبہ ہے زخمیوں سے بھی پوچھ گچھ جاری ہے۔


پرانی سبزی منڈی پر قانون کے محافظ پر بم سے حملے ،، مگر کوئی پیشرفت نہیں شفیق تنولی پر حملہ خود کش تھا ۔ یا بم موٹرسائیکل میں نصب تھا ۔ تفتیش کار اب تک کھوج لگانے میں مصروف ہیں ۔ اسی وجہ سے دھماکے کا مقدمہ بھی درج نہیں ہوسکا۔


پختون چوک کے قریب ایس ایچ او ماڑی پور پر حملے کے دوران 2 افراد جاں بحق اور 4 پولیس اہلکاروں سمیت 25 افراد زخمی ہوئے تھے۔


پولیس ذرائع کا کہنا ہے کہ بم ڈسپوزل اسکواڈ کی رپورٹ کے مطابق 4 سے 5 کلو دھماکہ خیز مواد میں نٹ بولڈ اور بال بیرنگ کا بھی استعمال ہوا


حملے میں استعمال ہونے والی موٹر سائیکل سے انجن اور چیچس نمبر کو گرینڈر کی مدد سے مٹایا گیا، تفتیشی ذرائع کے مطابق حملے میں ہلاک ہونے والے ایک شخص پر حملہ آور ہونے کا شبہ ظاہر کیا جارہا ہے۔


ذرائع کا کہنا ہے کہ مذکورہ شخص نے چند روز قبل ہی پختون چوک پر واقع چکن شاپ پر ملازمت اختیار کی تھی، پولیس نے اس کے اہل خانہ سے پوچھ گچھ بھی کی ہے جبکہ موبائل فون کا ڈیٹا بھی نکلوایا جا رہا ہے۔ 


ذرائع کے مطابق زخمیوں کو بھی اسپتالوں میں پولیس نگرانی میں رکھا گیا ہے اور ان کی طبی حالت کے مطابق ان کے بیانات بھی لیے جارہے ہیں ۔۔ شفیق تنولی نے ابتدائی بیان میں بتایا تھا کہ حملہ آور موٹر سائیکل پر سوار انکی طرف بڑھا تھا اور اسی دوران زوردار دھماکہ ہوا،،،ہلاک اور زخمی ہونے والوں میں پر شبہ شفیق تنولی کے اسی بیان کی روشنی میں کیا جا رہا ہے ۔۔


دوسری جانب جائے دھماکا پر زندگی معمول پر آرہی ہے ۔۔ دکاندار اپنی تباہ شدہ دکانیں کھولیں اور نقصانات کا جائزہ لیا۔ سماء

میں

burger

تحقیقات

ایس

law

او

ایچ

prosecutor

salary

poisoned

risks

Tabool ads will show in this div