Technology

فیس بک کی نئی نیوزٹیب کیلئے صحافیوں کی خدمات لینےکا فیصلہ

نیوز ٹیب کو نیوز فیڈ سے علیحدہ رکھا جائے گا

فیس بک انتظامیہ نے اپنے روایتی طریقہ معلومات میں تبدیلی کے لیے معتبر صحافیوں کی خدمات حاصل کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

نئے طریقہ کار کے تحت فیس بک انتظامیہ کی جانب سے روایتی طریقہ کار یعنی الوگرتھم کے ذریعے صارفین تک معلومات پہنچانے میں تبدیلی لائی جا رہی ہے۔

اس حوالے سے فیس بک انتظامیہ نے معتبر صحافیوں سے مدد لینے کی تصدیق کی ہے۔ صحافیوں کی ٹیم اس بات کا فیصلہ کرے گی کہ نیوز ٹیب میں فیس بک صارفین کے لیے ٹاپ اسٹوریز کیا ہوں گی۔

اس کے علاوہ فیس بک صارفین کی نیوزفیڈ میں نظر آنے والی دیگر معلومات لائک اور سبسکرائب کیے گئے صفحات ، ان کی فالوونگ اور صارف کی اپنی دلچسپی کو مد نظر رکھتے ہوئے دکھائے جائیں گے۔

فیس بک کی جانب سے نیوز ٹیب کو نیوز فیڈ سے علیحدہ رکھا جائے گا۔

فیس بک کے ہیڈ آف نیوز پارٹنر شپ کیمپ بیل براؤن نے خبررساں ایجنسی اے ایف پی سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ ’’نیوز ٹیب میں کی جانے والی تبدیلیوں کا مقصد صارفین کے فیس بک استعمال کرنے کے تجربے کو مزید بہتر بنانا ہے‘‘۔

کیمپ بیل براؤن کے مطابق فیس بک کے ٹاپ نیوز سیکشن کے لیے صحافیوں کی ایک چھوٹی تشکیل دی جا رہی ہے تاکہ اس بات کو یقینی بنایا جا سکے کہ نمایاں کی جانے والی اسٹوریز اس قابل ہیں۔

JOURNALIST

Tabool ads will show in this div