بھارتی ایئر چیف اپنے ہی جنگی طیاروں سے غیر مطمئن

بھارتی فضائیہ اب بھی پرانے طیارے چلا رہی ہے

بھارتی ایئر چیف نے اپنی ہی بھارتی فضائیہ کا مذاق اڑاتے ہوئے کہا ہے کہ اتنی پرانی کوئی گاڑی نہیں چلاتا، جتنے پرانے ہم طیارہ چلا رہے ہیں۔ لکھی ہوئی تقریر کو بار بار پھڑھتے ہوئے بھارتی ایئر چیف اٹکتے ہی رہے۔

نئی دہلی میں ذرائع ابلاغ کے نمائندوں سے گفت گو میں بھارتی ایئر چیف بریندر سنگھ دھنوا نے اعتراف کرتے ہوئے کہا کہ اتنی پرانی تو لوگوں کے پاس گاڑیاں نہیں ہوتی ، جتنے پرانے ہمارے پاس طیارے موجود ہیں۔

 

تقریب سے خطاب کرتے ہوئے بی ایس دھنوا نے کہا کہ بھارتی فضائی بیڑے میں شامل روسی ساختہ مگ 21 طیارے 44 سال پرانے ہوچکے ہیں، فضائیہ کو کسی بھی ہنگامی اور جنگی صورت حال سے نمٹنے کیلئے جدید اور بہترین لڑاکا طیاروں کے فلیٹ کی ضرورت ہے۔

انہوں نے کہا بھی ذی شعور شخص 44 سال قبل کی کار بھی چلانا نہیں چاہے گا کیوں کہ اس میں خطرہ ہے لیکن ہمیں اتنے ہی پرانے طیارے فضا میں اُڑانے ہوتے ہیں اور ایف-16 سے مقابلہ کرنا ہوتا ہے۔

انہوں نے بھارتی فضائیہ کو سال 1973 میں ملنے الے مگ طیاروں کی حالت زار پر حکومت کو آڑھے ہاتھوں لیا۔ بی ایس دھنوا نے امید ظاہر کی ہے کہ رواں برس روس کے جنگی جیٹ طیارے بھارت کو مل جائیں گے، فی الحال مگ طیاروں کی بھارت میں تیار کیے گے پرزوں سے مرمت کرکے کام چلایا جا رہا ہے۔

واضح رہے کہ بھارتی ایئر چیف کی جانب سے یہ بیان اس وقت سامنے ایا ہے، جب بھارتی وزیر دفاع راج ناتھ سنگھ نے پاکستان کو دھمکی دیتے ہوئے کہا تھا کہ بھارتی فضائیہ بڑی قابل ہے۔

یہاں یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ رواں برس 27 فروری کو بھارتی فضائیہ کے مگ۔21 طیارے کو پاکستان ایئر فورس کے بہادر پائلٹ نے مار گرایا تھا، جس کے بعد پاکستانی حدود میں گرنے والے بھارتی پائلٹ ابھینندن کو پاک فون نے گرفتار کیا تھا۔

pak-india

Indian Air Chief

Tabool ads will show in this div