مقبوضہ کشمیر میں کرفیو کا مسلسل 12 واں روز، خوراک و ادویات ختم

مقبوضہ کشمیر میں بھارت کی جانب سے نافذ کیے گئے کرفیو کا آج مسلسل 12 واں روز ہے جس کی وجہ سے خوراک اور ادويات ختم ہوچکی ہیں۔

بھارتی فوجیوں نے کشمیریوں کو عید منانے سے بھی روکا۔ کرفیو کے باعث خوراک اور ادويات ختم ہونے سے لوگ بھوک اور بيماري سے مر رہے ہيں۔ مواصلات اور ذرائع ابلاغ پر مکمل بليک آؤٹ ہے۔

يوم سياہ پر احتجاج روکنے کیلئے مقبوضہ کشمير ميں بھارت کی 9 لاکھ فوج ہر گلی، ہر گاؤں اور ہر محلے ميں تعينات ہيں۔

کشمیری کرفیو توڑ کر باہر نکل آئے، جھڑپیں جاری، متعدد زخمی

مقبوضہ کشمير ميں 4 اگست سے کرفيو نافذ ہے۔ بزرگ کشميري رہنما سيد علي گيلاني سميت سيکڑوں رہنما قيد يا نظر بند ہيں۔

واضح رہے کہ بھارت نے 5 اگست کو اپنے آئین کے آرٹیکل 370 اور 35 اے میں تبدیلی کرتے ہوئے مقبوضہ کشمیر کی خصوصی ریاست کی حیثیت ختم کر دی تھی جس کے تحت لداخ اور جموں و کشمیر کو الگ کر دیا گیا۔

مقبوضہ کشمیر سے متعلق نئے فیصلے کے بعد پاکستان نے بھارت سے سفارتی تعلقات محدود اور تجارتی معاملات معطل کیے ہوئے ہیں۔

Curfew 12th day

Tabool ads will show in this div