تازہ ترین

مقبوضہ کشمیر کی صورتحال، پارلیمنٹ کا مشترکہ اجلاس

اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر کی صدارت پارلیمنٹ کا مشترکا اجلاس آج ہو رہا ہے۔

قومی اسمبلی کے اسپیکر اسد قیصر کی سربراہی میں پارلیمنٹ کا مشترکا اجلاس شروع ہوا تو ایوان ایک دوسرے کے خلاف نعروں سے گونچ اٹھا۔ مشترکا اجلاس کا آغاز ہوا تو اسد قیصر کی جانب سے ایوان میں قرارداد سے متعلق بحث کیلئے اجازت دی گئی۔

ایوان میں پی ٹی آئی رہنما اعظم سواتی کی جانب سے کشمیر سے متعلق قرارداد پیش کی گئی، قرارداد میں ارٹیکل 370 کا ذکر نہ ہونے پر پی پی رہنما اور سابق چیئرمین سینیٹ رضا ربانی نے توجہ دلائی اور اس میں ترمیم کا مطالبہ کیا۔

رضا ربانی اور دیگر جماعتوں کے رہنماوں کے مطالبے پر اعظم سواتی کی جانب سے ترمیم کے بعد قرارداد کو دوبارہ ایوان کے سامنے پیش کیا گیا۔ اس موقع پر پاکستان تحریک انصاف کی رہنما شیری مزاری نے ایوان میں مائیک سنبھالا تو ایک بار پھر ایوان میں اس کے بولنے کے خلاف شور شرابا اور احتجاج شروع ہوگیا۔

اسپیکر بار بار معزز اراکین کو " ٓاپ تشریف رکھیں پلیز" کہہ کر حوصلہ رکھنے اور خاموش ہونے کا کہتے رہے تاہم ان کی ایک نہ سنی گئی۔ اپوزیشن کی جانب سے وزیراعظم عمران خان کی غیر حاضری پر بھی توجہ دلائی گئی اور نعرے لگا لگا کر کہا گیا کہ "وزیراعظم حاضر ہوں"، جس کے کچھ دیر بعد ہی وزیراعظم ایوان میں پہنچ گئے۔

اپوزیشن اور دیگر جماعتوں کی جانب سے احتجاج زیادہ بڑھنے پر اسپیکر نے اجلاس بیس منٹ کیلئے ملتوی کردیا۔ واضح رہے کہ ایوان کے مشترکا اجلاس میں صدر اور وزیراعظم ٓازاد کشمیر نے بازوں پر کالی پٹیاں باندھ کر اجلاس میں شرکت کی، بلاول بھٹو زرداری، شہباز شریف سمیت ملک کی اعلی سیاسی اور عسکری قیادت بھی مشترکا اجلاس میں شریک ہوئے۔

قبل ازیں ایوان کے مشترکا اجلاس کے موقع پر سیشن کا ٓاغاز تلاوت قرٓان پاک اور قومی ترانے سے ہوا۔ اس موقع پر پارلیمںٹ میں موجود تمام افراد نے اپنی اپنی نشتوں پر کھڑے ہو کر قومی ترانا پڑھا۔

ایوان کے خاص اجلاس کے موقع پر ایوان ہال میں غباروں سے قومی پرچم بھی آویزاں کیا گیا۔

غباروں سے بنایا گیا 40 فٹ لمبا پرچم پاک ہندو کمیونٹی کی جانب سے اظہار یکجہتی کے طور پر بنایا گیا ہے۔

NATIONAL ASSEMBLY

SHIREEN MAZARI

ASAD QAISAR

Joint session

azam Sawati

Tabool ads will show in this div