آئی ایم ایف سے رقم ملنے سے ترقی کے دروازے کھليں گے،حفیظ شیخ

 

مشير خزانہ حفيظ شيخ نے آئي ايم ايف سے ہونے والے معاہدے کي تفصيلات بتاديں اور کہا کہ کنٹريکٹ کے بعد ديگر اداروں کا بھي پاکستان پر اعتماد بڑھا ہے اور وہ پاکستان کو خالص بجٹ سپورٹ کے ليے فنڈز ديں گے جو کسي پروگرام سے مشروط نہيں ہوگا۔ مشیر خزانہ نے بتایا کہ حکومت  کو ورثے ميں 30 ہزار ارب روپے سے زيادہ قرضہ وراثت ميں ملا، حکومت نے بجٹ ميں نچلے طبقے کو ريليف ديا ہے، ايمنسٹي اسکيم ميں اثاثے ظاہر کرنے والے زيادہ تر افراد وہ ہيں جو کبھي ٹيکس کے نظام ميں تھے ہي نہيں۔

اسلام آباد میں مشير خزانہ حفيظ شيخ نے پريس کانفرنس کرتے ہوئے بتايا کہ آئی ایم ایف سے رقم ملنے سے ترقي کے دروازے کھليں گے اور یہ رقم  10سال ميں واپس کرنا ہوگی۔

حفيظ شيخ نے بتايا کہ سرکاري اداروں کي نجکاري سے متعلق آئي ايم ايف کا کوئي دباؤ ہے نہ مطالبہ ، فيصلہ پاکستان خود کرے گا۔

حکومت نے سیلز ٹیکس میں اضافہ آئی ایم ایف کے کہنے پر کیا،مشیر تجارت کا اعتراف

مشير خزانہ نے کہا کہ خوش آئند بات يہ بھي ہے کہ آئي ایم ايف سے معاہدے کےباعث ديگر اداروں کا بھي اعتماد بڑھا ہے اور جو بجٹ سپورٹ کے ليے فنڈز ديں گے۔

آئی ایم ایف کی رواں مالی سال مہنگائی کی شرح 13 فیصد تک بڑھنے کی پیش گوئی

انہوں نے موجودہ حکومت کي اثاثے ظاہر کرنے کي اسکيم کو تاريخ ميں سب سے کامياب قرار ديا اور بتایا کہ ايک لاکھ 37ہزار افراد نے اثاثے ظاہر کئے۔

پاکستان کیلئے آئی ایم ایف کا 6 ارب ڈالر قرض منظور

حفيظ شيخ نے کہا کہ حکومت نے منفرد بجٹ پيش کيا ہے جس ميں نچلے طبقے کوريليف ديا گيا، ايکسپورٹ بڑھانے اور امپورٹ کم کرنے کي کوشش کی گئی ہے۔

trade deficit

HafeezShaikh

Tabool ads will show in this div