بنوں میں مبینہ غفلت سے خاتون جاں بحق، ڈاکٹر کے خلاف مقدمہ درج

Jun 27, 2019

خیبر پختونخوا کے ضلع بنوں میں لیڈی ڈاکٹر کی مبینہ غفلت سے خاتون جاں بحق ہوگئی۔ ورثا کے احتجاج پر پولیس نے مقدمہ درج کرلیا جبکہ اسپتال انتظامیہ نے انکوائری کمیٹی تشکیل دی ہے۔

ضلع کرک کی رہائشی خاتون نصرت بیگم کو زچگی کے لیے وومن اینڈ چلڈرن ٹیچنگ اسپتال بنوں لایا گیا تھا جہاں ڈلیوری کے بعد ان کا انتقال ہوگیا جبکہ بچہ محفوظ ہے۔

متوفیہ کے شوہر شاہد عباس نے کہا کہ وومن اینڈ چلڈرن ٹیچنگ سپتال کے لیبر روم میں ڈیوٹی پر موجود لیڈی ڈاکٹر نے آپریشن کے ذریعے ڈیلیوری کرانا تجویز کیا جس کے بعد اُنہیں آپریشن تھیٹر لے گئے جہاں پر لیڈی ڈاکٹر زرتاج طواف نے آپریشن کیا اور خاتون کا آپریشن کے ذریعے بچہ پیدا ہوا۔

شاہد عباس نے الزام عائد کیا کہ بچے کی پیدائش کے بعد آپریشن تھیٹر عملہ بار بار ہم سے مٹھائی کیلئے رقم دینے کا تقاضا کرتا رہا۔ اس دوران خاتون کو آپریشن تھیٹر سے گائنی وارڈ منتقل کیا گیا تو ہم نے دیکھا کہ ان کا خون بہہ رہا ہے اور کنٹرول نہیں ہورہا، جس پر ہم نے ڈاکٹر کی منت سماجت کی کہ بچے کی ماں کو بچائیں مگر وہ صرف مٹھائی کے رقم کا تقاضا ہی کرتی رہی۔

انہوں نے کہا کہ ہمارے احتجاج پر متوفیہ کو دوبارہ آپریشن تھیٹر لے جایا گیا، جہاں سے کافی دیر کے بعد بچے کی ماں کو مردہ حالت میں نکالا گیا۔

شاہد عباس نے الزام عائد کیا کہ بچے کی ماں کو قتل کیا گیا ہے۔ ہم حکومت سے انصاف دلانے کی اپیل کرتے ہیں۔

اسپتال کے میڈیکل سپرٹنڈنڈنٹ طواب گل نے انکوائری کمیٹی تشکیل دے کر تین دن میں رپورٹ طلب کرلی۔ جن لیڈی ڈاکٹر پر الزام ہے وہ طواب گل کی بیوی ہیں۔

متوفیہ کے ورثا نے انکوائری کمیٹی کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ لیڈی ڈاکٹر زرتاج ایم ایس کی اہلیہ ہیں۔ ایسی صورت میں اُن سے انصاف کی توقع نہیں۔ ایم ایس کو معطل کرکے غیر جانبدار انکوائری کمیٹی کے ذریعے واقعہ کی تحقیقات کی جائیں اور ملوث لیڈی ڈاکٹر اور دیگر عملہ کے خلاف قانونی کاروائی کی جائے۔

ورثا نے واقعہ کے بعد لاش کو سڑک پر رکھ کر احتجاج کیا جس پر پولیس نے ڈاکٹر کے خلاف مقدمہ درج کرلیا ہے۔

Tabool ads will show in this div