بلاول بھٹو کا اسپیکر اور ڈپٹی اسپیکر قومی اسمبلی سے استعفے کا مطالبہ

Jun 10, 2019

چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری نے اسپيکر اور ڈپٹي اسپيکر قومی اسمبلی کا رويہ قابل مذمت قرار دیتے ہوئے استعفے کا مطالبہ کر دیا۔

اسلام آباد زرداري ہاؤس میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے بلاول بھٹو نے کہا کہ لاڑکانہ کے ايم اين اے کو بولنے کا موقع نہيں ديا گيا، تين حکومتي وزرا کو بولنے کا پورا موقع ديا گيا، جبکہ دوسرا دن ہے قومي اسمبلي ميں مجھے بولنے نہيں ديا گيا۔

چیئرمین پیپلز پارٹی نے کہا کہ نئے پاکستان ميں کسي کو بولنے کي اجازت نہيں ہے، حکومت اظہار رائے پر بھي پابندي لگا رہي ہے، یہاں تک کہ عدليہ پر بھي سازش کے تحت حملہ کيا گيا ہے۔ ريفرنس کے بارے ميں حکومت کو بتانا چاہيئے تھا۔

نیب نے درخواست ضمانت مسترد ہونے پر آصف علی زرداری کو گرفتار کرلیا

بلاول بھٹو نے کہا کہ بطور احتجاج آج آصف زرداري نے گرفتاري دي ہے، لیکن يہ وہي سلسلہ ہے جو ہم نے پہلے بھي ديکھا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم ڈرنے والے نہيں ہيں، موت سے اس بچے کو کيسے ڈرائيں گے جس کي والدہ کو شہيد کيا گيا اور کيسے اس بچے کو ڈرائيں گے جس کا باپ 11 سال جيل ميں رہا ہو۔

چیئرمین پیپلز پارٹی نے کہا کہ مارتے بھي ہيں اور رونے بھي نہيں ديتے، حکومت  ہمارے جمہوري حقوق پر حملے کر رہي ہے لیکن اس جمہوريت کيلئے جدوجہد ميرا فرض ہے۔

بلاول بھٹو نے کہا کہ اسپيکر سندھ اسمبلي کے گھر پر بھی حملہ کيا گيا، نيب اور باقي ادارے ارکان اسمبلي کے پيچھے پڑے ہيں۔ کتنے بھي سنگين الزام ہوں فيئر ٹرائل سب کا حق ہے۔

bilawal bhutto zardari

Asif Zardari arrest