حکومت جی ڈی پی سمیت دیگر اہداف حاصل کرنے میں ناکام، قومی اقتصادی سروے

موجودہ سال معاشی ترقی 3.3 فیصد رہے گی، حکومت جی ڈی پی، صنعتی ترقی، زراعت اور خدمات کے سالانہ اہداف حاصل کرنے میں ناکام رہی، مہنگائی اور قرضوں میں ریکارڈ اضافہ ہوا۔ قومی اقتصادی سروے پير کو جاری کیا جائے گا۔

حکومت کی موجودہ مالی سال میں معاشی کارکردگی کیا رہی؟ نتیجہ سماء نے حاصل کرلیا۔ تبدیلی سرکار معاشی ترقی، زراعت، صنعت، خدمات اور مینو فیکچرنگ میں بری طرح ناکام ہوگئی۔

رپورٹ کے مطابق 6.2 فیصد ہدف کے مقابلے میں جی ڈی پی گروتھ 3.3 فیصد رہی، معیشت میں ریڑھ کی ہڈی سمجھا جانے والا زراعت کا شعبہ بری طرح فیل ہوگیا، 3.8 کے مقابلے میں گروتھ صرف 0.8 فیصد رہی، بڑی فصلوں کی پیداوار کا ہدف 3.01 فیصد تھا جبکہ نتائج منفی 6.5 فیصد رہے۔

قومی اقتصادی سروے میں مزید بتایا گیا ہے کہ صنعت کا پہیہ بھی جام رہا، 4.9 کے مقابلے میں ترقی 1.4 فیصد رہی، حکومت خدمات کے شعبے میں بھی خاطر خواہ تبدیلی نہ دکھا سکی، گروتھ 6.5 کے مقابلے میں 4.7 فیصد رہی، ہاؤسنگ سروسز سیکٹر 4 فیصد کا ہدف پورا کرنے میں کامیاب ہوگیا۔

رپورٹ کے مطابق کاٹن، جنگلات، فشریز سمیت دیگر شعبوں کا ہدف بھی پورا نہ ہوسکا، تعمیرات کا 10 فیصد ترقی کا تیر نشانے پر نہ لگا، گروتھ منفی 7.6 فیصد رہی۔

دستاویز کے مطابق بجلی کی پیداوار اور گیس کی ترسیل میں نمایاں اضافہ ہوا، 7.5 فیصد ہدف کے مقابلے میں 40.5 فیصد رہی، مہنگائی 6 فیصد ہدف کے مقابلے میں 9.1 فیصد کی بلند سطح پر پہنچ گئی، ڈالر کی بلند پرواز بھی جاری رہی جو 150 روپے کی حد عبور کرگیا۔

رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ تجارتی اور کرنٹ اکاؤنٹ خسارے میں کمی آئی تاہم مجموعی قرضے 35 ہزار ارب سے تجاوز کرگئے۔

وزیراعظم کے مشیر برائے خزانہ ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ قومی اقتصادی سروے پیر کو جاری کریں گے۔

PTI

Economic Survey

Hafeez Shaikh

Tabool ads will show in this div