جنید خان کے مقابلے میں محمد عامر اور وہاب ریاض کی کارکردگی کیسی تھی؟

ورلڈ کپ 2019 کے لیے پاکستان کرکٹ ٹیم کے حتمی اسکواڈ میں فاسٹ بولرز وہاب ریاض، محمد عامر اور بلے باز آصف علی کی واپسی ہوئی ہے۔

آصف علی کو عابد علی، محمد عامر کو فہیم اشرف اور وہاب ریاض کو جنید خان کی جگہ اسکواڈ میں شامل کیا گیا ہے، اس قبل پی سی بی کی جانب سے جاری کر دہ اسکواڈ میں یہ 3 نام شامل نہیں تھے۔

عالمي کپ سے دس دن پہلے چیف سلیکٹر انضمام الحق نے حتمی اسکواڈ کا اعلان کرتے ہوئے فہيم اشرف کے بعد جنيد خان کي بھي وکٹ اڑا دی جنہوں نے اس فیصلے کے خلاف ’’کچھ بھی نہ کہا اور کہہ بھی گئے ‘‘ کے مصداق منہ پر ٹیپ لگا کر خاموش احتجاج کیا۔

ٹوئٹر پراپنی تصویرشیئر کرتے ہوئے جنید خان نےلکھا کہ ’’میں کچھ بولنا نہیں چاہتا کیونکہ سچ کڑوا ہوتا ہے‘‘۔

پی سی بی کے اس فیصلے کے تناظر میں اگرٹیم سے باہر کیےجانے والے جنید خان کے مقابلے میں محمد عامر اور وہاب رياض کی پرفارمنس پر نظر ڈالی جائے تو وہاب رياض دو سال سے ٹيم سے باہرتھے جنہیں چيمپيئنز ٹرافي ميں بھارت کےخلاف ناقص پرفارمنس پر ڈراپ کيا گیا تھا۔ وہاب کو اب بغير ميچ پريکٹس کے ہي عالمي کپ کا ٹکٹ مل گيا۔

وہاب ریاض کے کھیلے جانے والے آخری 14 ميچز پر نظرڈالی جائے تو انہوں نے 8 کی اوسط سے صرف 9 وکٹيں حاصل کیں جبکہ محمد عامر نے آخری 14 میچز میں 92 کی اوسط سے صرف 5 وکٹیں حاصل کیں ۔

بات کی جائے جنید خان کی تو لیفٹ آرم فاسٹ بالر نے اپنے آخری 14 ون ڈے میچز میں 35 کی اوسط سے 16 شکار کیے۔

ريکارڈ کے مطابق تو جنید خان کی بالنگ اوسط محمد عامراور وہاب رياض سے بہتر ہےلیکن ورلڈ کپ میں دونوں بالرز کی کارکردگی ہی اس بات کا فیصلہ کرے گی کہ جنید خان کو ڈراپ کرنے کا فیصلہ صحیح ہے یا غلط ۔

 

junaid khan

world cup 2019

Tabool ads will show in this div