Technology

دورِ حاضرمیں پاکستان کا ڈیجیٹل ٹیکنالوجی کے میدان میں بہترین سفر جاری

[video width="640" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2018/05/Telecom-Day-in-pakistan-isb-pkg-16-05.mp4"][/video]

ملکی معیشت میں 10 برس کے دوران ٹیلی کام سیکٹر کا حصہ 35 کھرب روپے سے زائد تک پہنچ گیا،تھری جی اور فور جی کی نیلامی سے 3 ارب ڈالر کمانے کے بعد فائیو جی کی طرف پیشرفت بھی جاری ہے۔ موبائل فون صارفین کی تعداد 16 کروڑ سے تجاوز کرچکی ہے۔

ورلڈ ٹیلی کمیونی کیشن اینڈ انفارمیشن سوسائٹی ڈے 17 مئی کو منایا جاتا ہے۔ پاکستان تیزی سے ڈیجیٹل دور میں داخل ہو رہا ہے۔ ملک میں 16 کروڑ سے زائد موبائل فون صارفین،3 جی ،4 جی اور براڈ بینڈ صارفین کی تعداد 7 کروڑ کے لگ بھگ ہوچکی ہے۔

ٹیلی کام سیکٹر کا ملکی معیشت میں سالانہ حصہ 5 کھرب سے زائد ہے، گذشتہ 10 برس میں یہ حصہ 35 کھرب روپے ہوچکا ہے۔ ٹیکسز سمیت ریونیو میں رواں مالی سال کا حصہ 147 ارب،10 برس میں 9 کھرب روپے سے زائد رہا۔

وزیر آئی ٹی ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی نے کہا کہ آنے والے دنوں میں ای ہیلتھ، ای کامرس، ای ایجوکیشن سمیت تمام معاملات ٹیلی کام کی ترقی سے جڑے ہیں۔

انٹرنیٹ بیکنگ صارفین کی تعداد 29 لاکھ ، بیکنگ ٹرانزیکشنز 2 کروڑ ، ٹرانزیکشن کا حجم 886 ارب روپے تک پہنچ گیا ہے جبکہ 2269ارب روپے کی 5 کروڑ برانچ لیس بیکنگ ٹرانزیکشنزہوچکی ہیں۔

تاہم ایسے میں معلومات اور آسانیوں کے سیلاب پر بند باندھنے کے مشورے بھی گونجنے لگے۔ چئیرپرسن قائمہ کمیٹی آئی ٹی سینیٹر روبینہ خالد کا کہنا ہے کہ ٹیلی کام سیکٹرکا منفی استعمال روکنا ہوگا۔

Tabool ads will show in this div