گائے کے نام پرگھوڑے کا گوشت فروخت کرنے والوں کو قید اور بھاری جرمانہ

Apr 18, 2019
[caption id="attachment_1524537" align="alignnone" width="980"] تصویر: سی این این[/caption]

گائے کے نام پر گھوڑے کا گوشت فروخت کرنے والوں کو جیل کی ہوا کھانے کے ساتھ ساتھ بھاری جرمانہ بھی بھگتانا پڑا۔

پیرس کی ایک عدالت نے  سال 2013 میں سامنے آنے والے کیس میں گائے کا گوشت کہہ کر گھوڑے کا گوشت فروخت کرنے والے 4 افراد کو 2 سال قید کی سزا سنا دی۔ سزا پانے والوں میں 2 فرانسیسی اور 2 ڈچ شہری شامل ہیں۔

چاروں مجرم یورپ میں گھوڑے کے گوشت پر گائے کے گوشت کا لیبل لگا کر فروخت کرتے تھے، اس کے علاوہ ایک فرانسیسی کمپنی پر ایک لاکھ یورو کا جرمانہ بھی عائد کیا گیا ہے۔

سال 2013 میں انکشاف ہوا تھا کہ یورپ بھر میں گائے کے نام پر گھوڑے کا گوشت فروخت کیا جا رہا تھا، یہ گوشت کم قیمت میں بیلجیئم ، رومانیہ اور کینیڈا سے درآمد کر کے برطانیہ اور فرانس میں فروخت کیا جاتا تھا۔

اس جرم میں جنوبی فرانس کی ایک مِیٹ پراسیسنگ کمپنی کے سابق ڈائریکٹر جیک پاژو کو 2 سال قید کی سزااور ایک لاکھ یورو جرمانہ عائد کیا گیا ۔ اس کے علاوہ عدالت نے جیک پاژو پر 2 سال تک گوشت کی صنعت میں کام کرنے کی پابندی بھی عائد کرتے ہوئے کمپنی کے منیجرکو ایک سال کے لیے معطل بھی کیا ۔

سال 2012 سے 2013 کے درمیان تقریبا 500 ٹن گائے کے گوشت کو گھوڑے کے گوشت کے لیبل کے ساتھ فروخت کرنے یوہانیس فازن نامی ایک ڈچ تاجر کوبھی 2 سال قید اور ساتھی کو ایک سال معطلی کی سزا دی گئی، دونوں پہلے بھی اسی نوعیت کے جرائم میں سزا یافتہ ہیں۔

cow meat

horsemeat scandal

Paris Court

Tabool ads will show in this div