سندھ اسمبلی میں پھر گرما گرمی، آغا سراج درانی اور فردوس شمیم نقوی میں جملوں کا تبادلہ

سندھ اسمبلی میں مسلسل دوسرے روز اراکین میں گرما گرمی، قيادت پر جملے کسنے پر پيپلز پارٹی اور پی ٹی آئی کے ارکانِ اسمبلی آمنے سامنے آگئے، اسپيکر آغا سراج درانی اور اپوزيشن ليڈر فردوس شميم نقوی کے درميان بھی تلخ کلامی ہوگئی۔

سندھ اسمبلی کا ہنگامہ خيز اجلاس جاری ہے، مسلسل دوسرے دن حکومتی اور اپوزیشن ارکان کے درمیان تو تو، میں میں ہوئی۔ اپوزيشن ليڈر فردوس شميم نقوی نے بات کرنا شروع کی تو اسپیکر سے نوک جھونک شروع ہوگئی، آغا سراج بھی جذباتی ہوگئے۔

گرما گرمی بڑھی تو پی ٹی آئی کے رکن کی جانب سے پیپلزپارٹی قيادت پر جملہ کسا گيا جس پر پی پی ارکان اپوزيشن پر چڑھ دوڑے۔ اسپيکر آغا سراج درانی نے کہا کہ فردوس شميم صاحب آپ گھر آئیں کھلاؤں گا، پلاؤں گا۔ فردوس شميم نے جواب دیا کہ مجھے شہد پينے کا شوق نہيں ہے۔

آغا سراج درانی نے دھمکی آمیز انداز میں کہا کہ رہائی ہونے دیں پھر جسے مجھ سے شکایت ہے وہ باہر ملے، ایوان میں آپ کو کچھ نہیں بول سکتا، ایوان سے باہر ملنا پھر پتہ لگ جائے گا۔

اجلاس کا وقت 2 بجے تھا، مگر ڈيڑھ گھنٹے کی تاخير ہوئی تو اپوزيشن ارکان نے اسپيکر کی ڈائس کے سامنے احتجاج بھی کيا۔

PTI

Sindh assembly

Firdos Ashiq Awan

Tabool ads will show in this div