بھارتی جارحیت کا جب اور جہاں چاہیں گے جواب دیں گے، شاہ محمود

وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ عالمی قیادت کو بھی بھارتی جارحیت سے آگاہ کیا گیا ہے، ملکی سیاسی قیادت کو اعتماد میں لینے کیلیے کمیٹی تشکیل دی گئی ہے۔ وزیر دفاع پرویز خٹک نے کہا ہےکہ پاک فضائیہ نے بھارتی دراندازی کا بروقت اور بھرپور جواب دیا ہے۔

اسلام آباد میں وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے وزیردفاع پرویز خٹک، وزیرخزانہ اسد عمراور ترجمان دفترخارجہ ڈاکٹر فیصل کے ہمراہ مشترکہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے بتایا کہ بھارتی جارحیت کے بعد وزیراعظم نے قومی سلامتی کمیٹی کا اجلاس طلب کیا جس میں موجودہ صورتحال کا جائزہ لیا گیا۔

انھوں نے کہا کہ آج کا واقعہ پاکستان کے خلاف جارحیت ہے، وزیراعظم عمران خان نے مسلح افواج اور قوم کو تیار رہنے کا کہا ہے،پاکستان بھارتی جارحیت کا بھرپورجواب دے گا، بھارت نے پاکستان کی سالمیت کی خلاف ورزی کی ہے۔

پاکستان کو اپنا دفاع اچھی طرح کرنا آتا ہے، صدر مملکت ڈاکٹرعارف علوی

انھوں نے مزید بتایا کہ ملکی سیاسی قیادت کو اعتماد میں لینے کیلیے کمیٹی تشکیل دی گئی ہے، پارلیمنٹ کامشترکہ اجلاس بلانےکافیصلہ کیاگیاہے۔ وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ ہیلے کاپٹر کے ذریعے پاکستانی اورعالمی میڈیا کو اس مقام پر لے جایا جائے گا جہاں بھارتی طیاروں نے پے لوڈ گرایا اور میڈیا کو حقائق سے آگاہ کیا جائے گا۔

بھارت کو ایسا جواب دیں گے کہ تمام قرض چکا دیں گے، سراج الحق

شاہ محمود نے بتایا کہ ترکی کے وزیرخارجہ سے ٹیلی فون پر بات ہوئی ہے اور انھیں ساری صورتحال سے آگاہ کیا ہے۔ پاکستان کی درخواست پر جدہ میں او آئی سی کا خصوصی اجلاس منعقد کیا گیا ہے،اس کے علاوہ گذشتہ روز متحدہ عرب امارت کے وزیرخارجہ کو اس صورتحال سے آگاہ کیا۔ انھوں نے مطالبہ کیا کہ آج او آئی سی کے بانی رکن ملک کے خلاف جارحیت کی گئی، او آئی سی اجلاس میں بھارت کو مدعو کرنے کا فیصلہ واپس لیا جائے۔

پاک فوج اور عوام بھارتی جارحيت کا منہ توڑ جواب ديں گے، گورنر پنجاب

وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ وزیراعظم کا 21 فروری کا بیان پاکستان سمیت بیرونی دنیا میں سراہا گیا۔ اس بیان میں تعاون اور معقولیت کی بات تھی۔ بھارت کو کہا گیا تھا کہ اگر کوئی شواہد ہیں تو پیش کئے جائیں۔

بھارتی جارحیت سے متعلق شاہ محمود قریشی نے مزید بتایا کہ بھارتی طیارے 2 بج کر 55 منٹ پر پاکستانی فضائی حدود میں داخل ہوئے اور پاکستانی طیاروں کی بروقت مداخلت سے بھارتی  طیارے 2 بج کر 58 منٹ پر پاکستانی حدود سے باہر بھاگ گئے۔

بھارت بین الاقوامی جارحیت تک پہنچ چکا جو خطے کیلئے خطرناک ہے، حِنا ربانی کھر

وزیرخارجہ نے واضح کیا کہ پاکستان کی لیڈرشپ کو بھارتی عزائم دیکھتے ہوئے اس پر ردعمل کا اظہار طے کرنا ہے،جارحیت کا جواب دینا ہمارا حق ہے،پاکستان کی سرحدوں کی حفاظت کی اہمیت کو سمجھتے ہیں۔

دشمن کی جارحیت خطے میں امن کی کوششوں کو نقصان پہنچانے کی کوشش ہے،قومی سلامتی کمیٹی

انھوں نے دو ٹوک کہا کہ کرتارپور میں امن کا پیغام تھا، کرتاپور کے راستے پاکستان نے بند کرنے کےلیے نہیں کھولے،ہندوستان پر سیاست کا بھوت سوار ہے، وہ خطے کے امن کو متاثر کررہا ہے۔

 

BALAKOT

Indianairforce

Tabool ads will show in this div