امریکا نے پاکستان کی مالی امداد افغان امن میں مثبت کردار سے مشروط کردی

امریکی نمائندہ خصوصی برائے افغانستان زلمے خلیل زاد کا کہنا ہے کہ اس خطے میں افغان امن کیلئے سعودی عرب سے زیادہ کوئی دوسرا ملک کردار ادا نہیں کرسکتا، پاکستان امن کیلئے کردار ادا کر رہا ہے تاہم اس کی مالی اعانت اور امداد افغانستان میں امن کے کردار سے مشروط ہے۔

افغان نیوز ٹی وی طولو سے گفت گو میں امریکی نمائندہ خصوصی برائے افغانستان زلمے خلیل زاد کا کہنا تھا کہ افغانستان میں امن کی کوشش کیلئے پاکستانی کوششوں کو تسلیم کرتے ہیں، پاکستان امن کیلئے اقدامات کررہا ہے، پاکستان کی جانب سے مزید بڑے اور عملی اقدامات کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ افغان امن عمل کیلئے حکومتی سربراہی میں مضبوط اور متحد مذاکراتی ٹیم ضروری ہے۔

زلمے خلیل زاد نے کہا کہ آئندہ ہونے والے قطر کے دارالحکومت دوحا میں مذاکرات کے دوسرے دور میں وہ طالبان کوافغان حکومت کے ساتھ مذاکرات پر ترغیب دینے اور سیز فائر پر مشتمل دو نکات پر زور دیں گے۔

امریکی نمائندہ خصوصی برائے افغانستان کا کہنا تھا کہ افغان امن عمل میں خطے کے کسی بھی ملک سے زیادہ سعودی عرب کا اہم کردار ہے۔ اس موقع پر انہوں نے کہا کہ پاکستان کی مالی امداد افغان مذاکراتی امن میں مثبت کردار ادا کرنے سے مشروط ہے، پاکستان نے بے شک بہتر کردار ادا کیا ہے، تاہم ابھی بھی اسے کلیدی اور بڑا کردار ادا کرنے کی ضرورت ہے۔

USA

peace process

ASHRAF GHANI

AFGHAN TALIBAN

ZALMAY KHALILZAD

Tabool ads will show in this div