خیبرپختونخوا میں جلد کی بيماری لشمينيا نے پنجے گاڑ ديے

خیبرپختونخوا میں جلد کي بيماري لشمينيا نے پنجے گاڑ ديے ہیں۔ صرف ايک سال ميں 21 ہزارسے زائد افراد مچھر کے کاٹنے کا شکار ہوئے۔

خيبرپختونخوا ان دنوں مچھر کے خوف ميں مبتلا ہے۔ بھورے رنگ کا مچھرجس کو سينڈ فلائي کہتے ہيں،اس نے اپنے ڈنگ سے صوبے کے 10اضلاع ميں صرف ايک سال ميں 21 ہزار افراد کو کاٹا ہے۔

 اس سلسلے میں سب سے زیادہ خيبر متاثر ہوا ہے۔ ضلع خيبر ميں 9378 کيسز رپورٹ ہوئے مہمند ميں 5373 باجوڑ ميں 2802 شمالي وزيرستان ميں 443 جنوبي وزيرستان ميں 354 کرم ميں 225 اور اوکرزئي ميں163 افراد مچھر کاٹنے سے جلدي امراض ميمبتلا ہوگئے۔

اس طر کے ديگر دس اضلاع ميں کيسز کي خاص تعداد موجود ہے۔صرف کرک ميں لشمينيا کے 1017 کيسز رپورٹ ہوچکے ہيں۔محکمہ صحت نے سات قبائلي اضلاع ميں اسکي ٹريٹمنٹ کيلئے پندرہ سينٹرز بنائے ہيں۔

ڈاکٹرز کہتے ہيں يہ مچھر افغانستان سے ٹريول کرکےاس صوبے ميں پہنچا ہے۔عوام سے درخواست ہے کہ وہاردگرد کےماحول کوصاف رکھيں اور جہاں يہ مچھر نظر آئےاس پر کيڑے مار دوا سے حملہ کرديں۔

HEALTH

Khaiber pakhtonkhwa

Leishmania

Tabool ads will show in this div