ٹیکنالوجی

بلوچستان کی پہلی نامیاتی کپاس تیار ہوگئی

بلوچستان کی پہلی نامیاتی کپاس کی فصل  تیار ہوگئی ،صوبائی وزیرانجینئرزمرک خان اچکزئی کہتے ہیں محکمہ زراعت بلوچستان کا ملکی تاریخ میں بڑا کا رنامہ ہے۔

ڈی جی زراعت ڈاکٹر جاوید ترین  نے سماء سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ  بلوچستان کے علاقے بارکھان اورلسیبلہ میں نامیاتی کپاس مکمل قدرتی ماحول میں کاشت کی جارہی ہے، نامیاتی طور پر پیدا کی جانے والی کپاس کی مارکیٹ ویلیو غیر نامیاتی طور پر پیدا ہونے والی کپاس کی نسبت دگنی سے بھی زائد ہے۔

 صوبائی وزیر انجیئنرزمرک خان اچکزئی نے بلو چستان میں پیدا ہونے والی ملکی تاریخ کی پہلی نامیاتی کپاس کا بیلکا کوٹ سبزل تحصیل صادق آباد میں افتتاح کیا ۔صوبہ بلو چستان کو یہ اعزاز حاصل ہے کہ پاکستان کی تاریخ کی پہلی نامیاتی کپاس کی جیننگ ڈبلیو ڈبلیو ایف  کے تعاون سے مکمل طور پر یہاں کی گئی ہے جو بین الاقوامی طور پر سرٹیفائیڈ ہے اور بلو چستان کے مختلف اضلاع میں مکمل قدرتی ماحول میں کاشت کی جارہی ہے۔

اس موقع پرصوبائی وزیر انجیئنرزمرک خان اچکزئی کاکہنا تھا کہ بلو چستان کی سرزمین جہاں معدنی وسائل سے مالامال ہے وہاں زرعی اعتبار سے بھی کافی زرخیز ہے آج کی یہ بڑی کامیابی صوبہ بلوچستان کے محکمہ زراعت کی ملکی تاریخ میں بڑا کارنامہ ہے اور محکمہ کے افسران کی کاوشوں کا ثمر ہے انہوں نے کہاکہ اس طرح کے مزید تجربات بھی کئے جارہے ہیں جن کے مثبت نتائج جلد سامنے آئیں گے جس کا براہ راست فائدہ صوبے کے زمینداروں کو ہوگا۔

تقریب میں سیکریٹری زراعت خلیق نذر کیانی ڈی جی زراعت توسیعی انعام الحق ،جاوید ترین اور ڈبلیو ڈبلیو ایف  کے نمائندوں نے بھی شرکت کی۔

WWF

Tabool ads will show in this div