کراچی پولیس کی موجودگی میں خاندانی تنازع میں خون ہوگیا

[video width="640" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2018/01/Sharfabad-CCTV-FTG-Upd-13-01.mp4"][/video]

کراچي کے علاقے شرف آباد ميں ذاتی رنجش پرسہيل نامي شخص نے فائرنگ کر کے منور نامي شخص کو قتل کرديا ۔ ملزم سہيل کے بيوي اور تين بيٹياں مقتول منور علي کے گھر  رہ رہي تھيں جس پر دونوں میں تنازع تھا۔

کراچی کے علاقے شرف آباد میں پولیس کی موجودگی میں منورعلی کو سرعام قتل کر دیا گیا۔ قتل کے وقت پولیس بھی موجود تھی اور قاتل کے پاس اسلحہ بھی تھا۔

پولیس بچوں سے ملاقات کے لئے  سہیل کو لائی توملزم نے فائرنگ کر کے سہيل کو قتل کردیا۔ واقعے کي سي سي ٹي وي فوٹيج منظرِ عام پر آگئی ہے۔

پولیس کے مطابق قاتل سہیل کی اہلیہ نے خلع لی ہوئی تھی اور مقتول کے گھر میں بچوں سمیت رہ رہی تھی۔ یہ کیس 3 سال سے ہائی کورٹ میں چیف جسٹس سندھ ہائی کورٹ کے پاس چل رہا تھا۔ منور احمد کی عمر 60 برس تھی ۔

پولیس عدالتی حکم پر سہیل کو بچوں سے ملانے لائی تواس نے منورعلی پر نائن ایم ایم پستول سے فائرکھول دیا۔

مقتول کے بھائی نے دعویٰ کیا ہے کہ فائرنگ کے بعد بھی وہ زندہ تھامگر پولیس کی تاخیر کی وجہ سے اس کی جان گئی ۔ انھوں نے الزام عائد کیا کہ پولیس اور قاتل ملے ہوئے ہیں۔

کراچی پولیس نے واقعے کے بعد سہیل کو حراست میں لے کر تھانے منتقل کردیا۔

domestic issue

family issue

Tabool ads will show in this div