عدالتی احکامات تک بسنت منانے کا امکان نہیں، وزیر قانون پنجاب

وزير قانون پنجاب راجہ بشارت کہتے ہیں کہ جب تک عدالت حکم نہیں دے گی تب تک صوبے میں بسنت منانے کے امکانات نہیں ہیں۔


سماء کے خصوصی نمائندے نعیم اشرف بٹ کو انٹريو ديتے ہوئے وزیر قانون پنجاب راجہ بشارت نے شکوہ کيا کہ وزير ثقافت نے بسنت کا اعلان کرکے خود ہي کميٹي بنائي اور پھر اس ميں مجھے شامل بھي کرليا۔

انہوں نے کہا کہ بسنت کے اعلان پر میں نے عدالت عظمیٰ کا فیصلہ دیکھایا جس میں لکھا تھا کہ بسنت تہوار کے نتیجے میں ہونے والے نقصانات کا ازالہ صوبائی حکومت کو برداشت کرنا پڑے گا۔

پنجاب حکومت نے فروری 2019ء میں بسنت منانے کا اعلان کردیا

لاہور ہائیکورٹ نے بسنت کی اجازت پر پنجاب حکومت سے جواب طلب کرلیا

وزير قانون نے يہ بھي کہا کہ ڈاکٹر اريبہ کے کيس ميں حنيف عباسي نے مجھ تک رسائی حاصل نہیں کی بلکہ مشترکہ دوست نے کام کيلئے کہا، ميں نے ايم ايس (میڈیکل سپرنٹنڈنٹ) کو کہا ليکن انکا رويہ درست نہ تھا۔

وزیر قانون پنجاب نے مزید کہا کہ صوبہ 1200 ارب روپے کا مقروض ہے جبکہ اورنج لائن ٹرین اور ميٹرو بس جيسے سفيد ہاتھي کو اربوں روپے دے کر چلانا پڑ رہا ہے۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ پوليس میں اصلاحات سے متعلق ایک پیکج لا رہے ہیں، اس وقت ایک تھانيدار کم از کم 20 گھنٹے کی ڈیوٹی دیتا ہے جس کی ڈیوٹی ہم 8 گھنٹے کر دیں گے۔

METRO BUS

Punjab law minister

basant festival

Tabool ads will show in this div