اراضی قبضے میں ملوث لیگی ایم این اے سپریم کورٹ سے گرفتار

Dec 25, 2018

مسلم لیگ (ن) کے رکن قومی اسمبلی افضل ندیم کھوکھر کو پولیس نے سپریم کورٹ لاہور رجسٹری سے گرفتار کرلیا۔ پولیس کے مطابق افضل ندیم کھوکھر کے خلاف ایک شہری کی اراضی پر قبضے کا مقدمہ درج ہے۔

لاہور کے ایک شہری نے ایف آئی آر درج کراتے ہوئے کہا تھا کہ کئی سال قبل 34 مرلہ زمین خریدی تھی، اب اس جگہ پر افضل کھوکھر نے کھوکھر پیلس کے نام سے اپنی رہائش گاہ بنا رکھی ہے۔

اس سے قبل سپریم کورٹ لاہور رجسٹری میں مسلم لیگ (ن) کے رکن قومی اسمبلی افضل کھوکھر اور ان کے بھائی رکن صوبائی اسمبلی سیف الملوک کھوکھر کے خلاف لاہور ڈیویلپمنٹ اتھارٹی (ایل ڈی اے) سٹی از خود نوٹس کیس کی سماعت ہوئی۔ چیف جسٹس میاں ثاقب کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے خصوصی بنچ نے سماعت کی۔

گذشتہ سماعت پر عدالت نے افضل کھوکھر اور ان کے بھائی سیف الملوک کھوکھر کے نامای سی ایل میں ڈالنے اور کھوکھر برادران کو اپنے اور اہل خانہ کے نام تمام جائیداد کی تفصیلات جمع کرانے کا حکم دیا تھا۔

آج سماعت کے دوران عدالت نے افضل اور سیف الملوک کھوکھر کے تیسرے بھائی شفیع کھوکھر کو ڈی جی اینٹی کرپشن کے حوالے کرتے ہوئے حکم دیا کہ دو گھنٹے میں ان کا بائیو ڈیٹا تیار کرکے پیش کیا جائے۔

چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ کھوکھر برادران کے رقبے کا اشتمال کرنے والے افسران اب کہاں تعینات ہیں۔ ایل ڈی اے افسر نے عدالت کو آگاہ کیا کہ کھوکھر برادران کی ایل ڈی اے اراضی پر تعمیر مارکیٹ کا آپریشن کرنے والے تمام افسران معطل کر دیئے گئے ہیں۔ جس پر چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ سب ملے ہوئے تھے، غریب اور مسکینوں کو جائیدادوں سے محروم کیا گیا۔

چیف جسٹس نے کہا کہ جب 1977 میں اشتمال کردیا گیا تو پھر اسے تبدیل نہیں کیا جاسکتا، یہ طاقتور لوگ تھے اس لیے 2013 میں دوبارہ غیر قانونی اشتمال کرایا۔ یہ اتنے طاقتور لوگ ہیں کہ جو ان کے خلاف بات کرے انہیں مروا دیتے ہیں۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ مسکین اور غریب لوگوں کو جائیداد سے محروم کرنے والے افسران کو نہیں چھوڑیں گے۔

عدالت نے ان تمام افسران ، پٹواریوں اور قانون گو اور تحصیلدار کی رپورٹ پیش کرنے کا حکم دیتے ہوئے سماعت ملتوی کردی۔

PML N

Land Grabber

Tabool ads will show in this div