Technology

امریکی خلائی جہاز اسپیس ایکس کی روانگی مؤخر

Dec 20, 2018
An airline comes in for a landing at LAX near the site as work continues on the entrance to a tunnel across the road from Space X headquarters in Hawthorne, California on December 18, 2018, ahead of this evening's unveiling of the first part of founder Elon Musk's vision to a vast network of underground tunnels to help ease traffic congestion in Southern California. (Photo by Frederic J. BROWN / AFP)
An airline comes in for a landing at LAX near the site as work continues on the entrance to a tunnel across the road from Space X headquarters in Hawthorne, California on December 18, 2018, ahead of this evening's unveiling of the first part of founder Elon Musk's vision to a vast network of underground tunnels to help ease traffic congestion in Southern California. (Photo by Frederic J. BROWN / AFP)

امریکی کاروباری شخصیت ایلن مَسک کے خلائی جہاز اسپیس ایکس کی خلا کے لیے روانگی کو آخری وقت پر تکنیکی وجوہات کی بنا پر مؤخر کردیا گیا ہے۔

امریکی خلائی تحقیقاتی ادارے کی جانب سے جاری کردہ رپورٹ کے مطابق اسپیس ایکس فیلکن نائن قسم کا راکٹ ہےاور یہ 500 ملین ڈالرسےتیارکیاجانے والا ایک گلوبل پوزیشننگ سسٹم (جی پی ایس) لےکرجائےگا۔

اس خلائی پروازکوامریکی فوج نے قومی سلامتی کا مشن بھی قراردےرکھاہے۔خلامیں بھیجا جانے والا جی پی ایس سسٹم امریکی ٹیکنیکل ادارے لاک ہیڈ کا تیارکردہ ہے۔اس طرح کے مجموعی 32 سسٹم خلا میں روانہ کیے جائیں گے۔اِس سسٹم کا آزمائشی عمل اگلے برس کے وسط میں شروع ہوگا۔

SPACE X

Tabool ads will show in this div