خانہ بدوش بنجارن ریشماں کا ظاہری سفر آج تمام ہوا

اسٹاف رپورٹ
کراچی : خانہ بدوش بنجارن کا ظاہری سفر آج تمام ہوا مگر ریشماں کی آواز طويل عرصے کانوں ميں گونجے گی۔

لمبی جدائی کے گانے سے شہرت کی بلندیوں پر پہنچنے والی ريشماں طويل عرصے موت سے لڑتے رہنے کے بعد آج جدا ہوگئيں۔ اسی کی دھائی ميں بننے والی فلم ہيرو شايد لوگ بھول جائيں مگر يہ گانا ياد رہے گا جس کے ذريعے ريشماں نے ملکی سرحدوں کے پار اپنا لوہا منوايا۔
  
فن کے قدردانوں نے تو ريشماں کو بارہ سال کی عمر ميں ہی چن ليا تھا جب انہوں نے ساٹھ کی دھائی ميں لال شہباز قلندر کے مزار پر لعل ميری پڑھا۔ ريشماں بلبل صحرا تو تھيں مگر کوئل کی کوک آج بھی سماعتوں میں رس گھول رہی ہے۔

چار دھائيوں تک فوک گلوکاری ميں اپنا لوہا منوانے والی ريشماں کو ستارہ امتياز سميت بے شمار اعزازات سے نوازا گيا۔ ریشماں کی آواز کے دیوانے صرف پاکستان ہی نہیں بھارت دبئی اور دیگر ممالک میں بھی موجود ہیں، جنہوں نے ہر دور میں صحرا کی بلبل کو ہمیشہ موسیقی میں اعلیٰ مقام دیا۔ سماء

کا

آج

vaccines

entry

spinner

Tabool ads will show in this div