سپریم کورٹ کا پاکستان کڈنی اینڈ لیورٹرانسپلانٹ کےکنٹرول کےلیےقانون سازی کاحکم

Dec 15, 2018

سپریم کورٹ نے پاکستان کڈنی اینڈ لیور ٹرانسپلانٹ کا کنٹرول سنبھالنے کے لیے قانون سازی کی سمری پر صوبائی کابینہ کو دو ہفتے میں فیصلہ کرنے کا حکم دے دیا۔ عدالت نے پی کے ایل آئی انتظامی کمیٹی میں سرجن جنرل آف پاکستان کو بھی شامل کرنے اور ایک ہفتے میں پاک فوج اور سرجن جنرل کی رضامندی لینے کا بھی حکم دے دیا۔

چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کی سر براہی میں تین رکنی بنچ نے پاکستان کڈنی اینڈ لیور ٹرانسپلانٹ اسپتال سے متعلق کیس کی سماعت کی۔ سماعت کے دوران چیف جسٹس نے کہا کہ 22 ارب روپیے خرچ کر دیئے، ساری رقم ایک ٹرسٹ کودے دی گئی،دو مرتبہ ایڈوکیٹ جنرل نے کہا یہ قانون تبدیل کر رہے ہیں، سوال یہ ہے کہ ٹرسٹ کو رہنا چاہئے یا نہیں ۔

چیف جسٹس نے پی کے ایل آئی کے انچارج ڈاکٹر سعید اختر سے استفسار کیا کہ 3 سال سے آپ 20 لاکھ تنخواہ لے رہے ہیں، جس پر انہوں نے جواب دیا کہ میں نے پی کے ایل آئی سے کوئی تنخواہ نہیں لی، انہوں نے بتایا کہ ہم نے 21 کڈنی ٹرانسپلانٹ کئے ہیں، کینسر کے علاج بھی کئے ہیں،چیف جسٹس نے کہا کہ بنیادی طور پر یہ لیور کا ٹرانسپلانٹ تھا،گردوں کے آپریشن تو دوسری جگہوں پر بھی ہو رہے ہیں، آپریشن تھیٹر فعال نہیں ہے۔

چیف جسٹس نے ڈاکٹر سعید اختر سے کہا کہ آپ شہباز شریف کے بڑے قریب تھے،اگر آپ کہیں تو آپ کو بتادوں گا کہ کیسے آپ شہباز شریف سے ملے تھے، ہمیں یہ سمجھائیں کہ پی کے ایل آئی کے لیے ٹرسٹ کی ضرورت کیا ہے، ٹرسٹ تو ایک خاص تعلق کی وجہ سے سابق وزیر اعلی نے بنایا تھا، کیا ٹرسٹ نے کبھی اپنا مالی حصہ ڈالا ہے، ممبر بورڈ نے جواب دیا کہ ٹرسٹ نے 165 ملین فنڈز کا حصہ ڈالا ہے، چیف جسٹس نے کہا کہ جون میں ایک لیور ٹرنسپلانٹ کا بھی آپریشن نہیں ہو سکا جتنے پیسے پی کے ایل آئی پر خرچ کیے گئے اتنے پیسوں میں تو پانچ ہسپتال بن جاتے یہ براہ راست کیس نیب یا اینٹی کرپشن کو دینا چاہئے۔

عدالت نے پی کے ایل آئی کا کنٹرول سنبھالنے کے لیے قانون سازی کی سمری پرصوبائی کابینہ کو دو ہفتے میں فیصلہ کرنے کاحکم دے دیا، عدالت نے پی کے ایل آئی انتظامی کمیٹی میں سرجن جنرل آف پاکستان کو بھی شامل کرنے اور ایک ہفتے میں پاک فوج اور سرجن جنرل کی رضامندی لینے کا بھی حکم دے دیا۔ کیس کی سماعت دو ہفتوں تک ملتوی کر دی۔

pakistan kidney and liver transplant

Tabool ads will show in this div