بلوچستان کے خشک سالی سےمتاثرہ اضلاع ميں لاکھوں جانورمتاثر

Dec 13, 2018

[video width="640" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2018/12/Drought-animals-1500-Qta-pkg-11-12.mp4"][/video]

بلوچستان میں خشک سالی نے جہاں زراعت  کو تباہی سے دو چار کر دیا،وہيں لاکھوں جانوروں کی زندگیاں بھي خطرے میں ہيں ۔  

مالداری کا شعبہ  بلوچستان کی معیشیت میں ریڑھ کے ہڈی کی حیثیت رکھتا ہے  مگرخشک سالی کے اثرات  نے اس شعبے کو بھی بری طرح متاثرکیا ہے ۔ ضلع پشین کی تحصیل بوستان سے تعلق رکھنے والا شائستہ خان کا شمار بھی ان مالداروں میں ہے جو خشک سالی سے بری طرح متاثر ہو رہے ہیں ۔

شائستہ خان  کا سما سے بات کرتے ہوئے کہنا تھا کہ دوماہ کے دوران ہم ایک لاکھ دس ہزار روپے سے زائد جانوروں کی خوراک پر خرچ کر چکے ہیں  جب کہ سال ابھی باقی ہے۔

محکمہ امور حیوانات کی ایک رپورٹ کے مطابق بلوچستان میں مختلف قسم کے جانوروں کی تعداد تین کروڑ ستاون لاکھ سے زائد ہے ،صوبے کے کل سات میں سے چار ڈویژنز میں دس لاکھ سے زائد جانور خشک سالی سے متاثر ہوئے ہیں ۔

کمشنر رخشان ڈویژن صالح محمد ناصر  کہتے ہیں کہ میراجو ڈویژن ہے اس میں چھ سے سات لاکھ جانور متاثر ہوئے ہے ۔

وزیراطلاعات بلوچستان  ظہور احمد بلیدی کا کہنا ہے کہ حکومت مالداروں کے ساتھ تعاون اور جانوروں کو خوارک کی فراہمی کی منصوبہ بندی کر رہی ہے ۔وزیراطلاعات  کے مطابق  اس سلسلے میں وزیراعلیٰ کو سمری موو ہوگئی ہے ، جلد از جلد فنڈز مختص ہو کر جانوروں کی خوارک کا بندوبست ہو جائے گا۔

بلوچستان میں ستر فیصد سے زائد لوگوں کا ذریعہ معاش مالداری ہے،بلوچستان میں جاری خشک سالی کی وجہ سےجانوروں کیلئے خوراک اور پانی کی کمیابی،چراگاہیں تباہ ہونے سے بڑے پیمانے پربے روزگاری پھیل رہی ہے۔

 

drought in balochistan

live stock in balochistan

drought effected areas

Tabool ads will show in this div