قومی ایئر لائن کے 12 پائلٹس اور 73 کریو ممبران کی ڈگریاں جعلی نکلیں

قومی ایئرلائن کے بارہ پائلٹس اور تہتر کریو ممبران کی ڈگریاں جعلی نکلیں، پی آئی اے نے تفصیلات سپریم کورٹ میں پیش کردیں، عدالت نے ،سول ایوی ایشن ،پی آئی اے اور ڈگریوں کی تصدیق نہ کرنے والی یونیورسٹیوں کے سربراہان کو طلب کرلیا۔

باکمال لوگوں کی سروس تو لاجواب تھی ہی، اُن کی تعلیم کا بھی کوئی جواب نہیں، پی آئی اے کے 12 پائلٹس اور 73 کریو ممبران کی ڈگریاں ہی جعلی نکلیں، قومی ایئر لائن نے تفصیلات سپریم کورٹ میں پیش کر دیں ۔

پائلٹس اور ایئر لائنز عملے کی جعلی ڈگریوں کے کیس کی سماعت کے دوران پی آئی رپورٹ میں بتایا گیا کہ ادارے میں مجموعی طور پر 498 پائلٹس اور 1864 کریو ممبران ہیں، چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ عدالت نے جعلی ڈگریوں پر ایک سال پہلے نوٹس لیا تھا۔

پی آئی اے اور سول ایوی ایشن نے ڈگریوں کی تصدیق سے متعلق کوئی ٹھوس اقدامات نہیں کئے، سول ایوی ایشن حکام نے بتایا کہ جعلی ڈگریوں والے پائلٹس کو گراؤنڈ کرکے اُن کے لائسنس معطل کردیئے گئے ہیں، جن کے خلاف کارروائی کریں وہ حکم امتناع لے آتے ہیں۔

چیف جسٹس نے کہا کہ جعلی ڈگریوں کے کیسز کسی اور عدالت میں نہیں جائیں گے، جس کو اعتراض ہو براہ راست سپریم کورٹ سے رجوع کرے۔

کیس کی سماعت 24 دسمبر تک ملتوی کردی گئی، آئند سماعت پر پی آئی اے سول ایوی ایشن اور ڈگریوں کی تصدیق نہ کرنے والی یونیورسٹیوں کے سربراہان طلب کرلیا ، ماتحت عدالتوں سے جعلی ڈگری ہولڈرز کے کیسز کا تمام ریکارڈ بھی مانگ لیا گیا۔

CIVIL AVIATION

Tabool ads will show in this div