کراچی میں چینی قونصلیٹ پر حملہ، دو اہلکاروں سمیت 4 افراد شہید، حملہ آور ہلاک

[video width="636" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2018/11/noBvsIUExZq5lr4u.mp4"][/video]

ڈی آئی جی ساوتھ نے تصدیق کی ہے کہ سیکیورٹی فورسز نے کراچی میں چینی قونصلیٹ پر حملے کو ناکام بناتے ہوئے تینوں حملہ آوروں کو ہلاک کر دیا ہے جب کہ آپریشن میں دو اہلکاروں سمیت 4 افراد شہید ہوگئے۔

12:00pm

کراچی میں چینی قونصلیٹ پر حملے کے دوران شہید ہونے والوں میں باپ بیٹا بھی شامل ہیں۔ دونوں افراد چینی قونصلیٹ کے ویزا سیکشن کے دفتر کام سے گئے تھے۔

11:00am

ڈی جی ساوتھ جاوید اوڈھو کا کہنا ہے کہ حملے سے متعلق متضاد اطلاعات سامنے آئیں، تاہم موقع پر موجود سیکیورٹی اہل کاروں نے جان داو پر لگا کر حملہ ناکام بنایا۔ آپریشن میں تین حملہ آوروں کو ہلاک کردیا گیا ہے، جب کہ بم ڈسپوزل اسکواڈ نے علاقہ کلیئر قرار دیدیا ہے۔

10:40 am

کراچی پولیس چیف نے سیکیورٹی فورسز کے آپریشن میں تمام حملہ آوروں کو ہلاک کرنے کی تصدیق کردی ہے، جب کہ قونصلیٹ کے اندر اور اطراف میں کلیئرنس کا عمل جاری ہے۔ ہلاک ہونے والوں میں خودکش حملہ آور بھی شامل تھا، جس سے خود کش جیکٹ برآمد کی گئی ہے۔ کالعدم بلوچستان لبریشن آرمی کی جانب سے حملے کی ذمہ داری قبول کی گئی ہے۔

10:00 am

کلفٹن میں چینی قونصیلٹ کے قریب حملے کے بعد قانون نافذ کرنے والے اداروں کی جانب سے آپریشن کا آغاز ہوا، جس میں اب تک کی موصول اطلاعات کے مطابق دو خود کش حملہ آوروں کو ہلاک، جب کہ فائرنگ کے تبادلے میں دو پولیس اہل کار شہید ہوئے۔ ایک اہل کار کو تشویش ناک حالت میں اسپتال منتقل کردیا گیا ہے۔

10:15 am

حملے کے اطلاع ملتے ہی وزیراعلیٰ سندھ مرادعلی شاہ نے چینی قونصل جنرل سے رابطہ کیا۔ وزیراعلی نے چینی قونصلیٹ پر حملے کو پاک چین تعلقات خراب کرنے کی ساززش قرار دیا۔ وزیراعلیِ کا کہنا ہے کہ حملے میں قونصل جنرل سمیت تمام عملہ محفوظ ہے۔

9:45 am

فائرنگ اور دھماکے کی اطلاع کے بعد شہر بھر کے اسپتالوں میں ایمرجنسی نافذ کردی گئی۔

9:30 am

 صبح کے وقت کراچی کے علاقے کلفٹن بلاک 4 میں چینی قونصلیٹ کے ویزا سیکشن آفس کے قریب فائرنگ  اور دھماکے کی اطلاع ملتے ہی رینجرز اور پولیس کی بھاری نفری موقع پر پہنچ گئی۔ ابتدائی طور پر ایس ایس پی ساوتھ پیر محمد شاہ نے فائرنگ اور دھماکے کی تصدیق کی۔

چینی قونصیلٹ کے قریب فائرنگ اور دھماکے کی اطلاع کے بعد امدادی ٹیمیں بھی موقع پر پہنچ گئیں۔ قانون نافذ کرنے والے اداروں نے علاقے کو گھیرے میں لے کر متعلقہ سڑکوں کو سیل کردیا۔ واضح رہے کہ یہ علاقہ ریڈ زون میں واقع ہے۔ پولیس حکام  کا کہنا تھا کہ فی الحال دھماکے کی نوعیت سے متعلق کچھ نہیں کہہ سکتے کہ یہ دھماکا کس نوعیت کا ہے، علاقے میں دو طرفہ فائرنگ کا سلسلہ بھی وقفے وقفے سے جاری رہا۔

 

ابتدا میں  فوری طور پر کسی قسم کے جانی نقصان کی تفصیلات سامنے نہیں آسکی تھی۔ عینی شاہدین کا کہنا تھا کہ چینی قونصلیٹ کے سیکیورٹی اہلکاروں نے جوابی فائرنگ کی ہے۔ عینی شاہدین کا مزید کہنا تھا کہ حملہ آور تین تھے جن کے ہاتھوں میں گنیں اور ہینڈ گرنیڈ تھے، تاہم سیکیورٹی حکام کی جانب سے اس حوالے سے ابتدائی طور پر کوئی تصدیق نہیں ہو سکی تھی۔

 

یہاں یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ جولائی سال 2012 میں بھی کلفٹن میں چین کے قونصل خانے کے قریب ایک دھماکا ہوا تھا، جس میں متعدد گاڑیوں کو نقصان پہنچا، جب کہ کم شدت کے اس دھماکے میں کوئی ہلاک یا زخمی نہیں ہوا تھا۔

TALIBAN

KARACHI FIRING

chinese consulate

attack on chinese

Tabool ads will show in this div