سینیٹ ہنگامے پر شبلی فراز بھی بول پڑے

[video width="640" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2018/11/GMF-Shibli-Faraz-Sot-15-11.mp4"][/video]

سینیٹ اجلاس میں جاری شور شرابے پر پی ٹی آئی کے رہنماء شبلی فراز بھی بول پڑے۔ سینیٹ میں اپنے وزراء کا دفاع کرتے ہوئے بولے ہمارے لیڈر اور وزراء کی ذات پر بات کرتے ہوئے گھٹیا زبان استعمال کی جاتی ہے، اُس وقت ایوان کا وقار کہاں چلا جاتا ہے ۔

انہوں نے کہا کہ آپ بے شک ہماری پالیسیز پر تنقید کریں لیکن کسی کو حق نہیں کہ کسی کی ذات پر بات کرے۔

شبلی فراز نے کہا کہ کبھی ہمارے لیڈر اور کبھی ہمارے وزراء کی ذات پر بات کی جاتی ہے اور ایوان میں گھٹیا زبان استعمال کی جاتی ہے، ایسے وقت میں ایوان کا وقار کہاں جاتا ہے اور اُس وقت اپوزیشن کھڑی کیوں نہیں ہوتی۔

مزید پڑھیے: سینیٹ اجلاس میں اپوزیشن کا وزیرِاطلاعات کے بیان پراحتجاج،معافی کامطالبہ

اس سے پہلے آج جمعرات کی صبح سینیٹ میں اجلاس شروع ہوتے ہی گرما گرم صورتحال اختیار کرگیا۔ متحدہ اپوزیشن نے وزیراطلاعات فواد چوہدری کے گذشتہ روز کے بیان پر ایوان سے واک آؤٹ کیا۔ اسپیکرنے فواد چوہدری کو ایوان سے معافی مانگنے کی رولنگ جاری کردی۔

اجلاس کے شروع میں ہی حکومتی اراکین اور اپوزیشن کے درمیان تلخ جملوں کا تبادلہ ہوا۔ میر حاصل بزنجو نے کہا کہ وزیراطلاعات کے معافی مانگنے تک ایوان میں نہیں آئیں گے۔ راجہ ظفر الحق بولے کہ کل جو بدمزدگی ہوئی، اپوزیشن نے ایوان سے واک آؤٹ کیا۔ انھوں نے اسپیکر کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ نہ آپکی کوئی بات سنتا ہے اورنہ ہی مائیک بند کرنے پربات ختم کرتے ہیں۔

مزید پڑھیے: معاشی دہشت گردی کی تحقیقات کے لیے کمیٹی بنائی جائے، فواد چوہدری

شبلی فراز نے پیشکش کی کہ ہمارے وزیر اور مشاہد اللہ کی تقریر منگوائی جائے، بتایا جائے کہ کس نے غیر پارلیمانی الفاظ استعمال کئے، آپ کمیٹی بنا دیں بطور پارلیمانی لیڈر معافی مانگ سکتا ہوں۔

pti leader

Senate Session

SHIBLI FARAZ

Senate brawl

Tabool ads will show in this div